پہلی بیوی کی اجازت کے بغیر دوسری شادی کرنے پر شوہر سے جواب طلب

پہلی بیوی کی اجازت کے بغیر دوسری شادی کرنے پر شوہر سے جواب طلب

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


پشاور(نیوزرپورٹر)پشاورہائی کورٹ نے پہلی بیوی کی اجازت کے بغیردوسری شادی کرنے پرشوہر کوعدالت طلب کرتے ہوئے جواب مانگ لیاہے عدالت عالیہ کے جسٹس اکرام اللہ خان نے اپنی نوعیت کے دلچسپ کیس کی سماعت کی اس موقع پر خاتون مسماۃ ارم حسن کے وکیل میاں سلیمان شاہ نے عدالت کو بتایا کہ انکی موکلہ کے شوہر محمد ابراہیم نے ان سے اجازت لئے بغیر دوسری شادی کی ہے قانون کے مطابق اب اگر شادی شدہ شخص دوسری شادی کرے گا تو پہلی بیوی سے تحریری طور پر اجازت لے گا تاہم انکی موکلہ کو بتائے بغیر انکے شوہر نے دوسری شادی کی ہے انہوں نے اپنے دلائل میں عدالت کو مزید بتایاکہ خاتون نے اپنے شوہر کے خلاف متعلقہ یونین کونسل میں بھی درخواست دی تھی مگر وہاں پر بھی اس کی درخواست پر کوئی غور نہیں کیا گیا جس کے بعد انہوں نے مقامی عدالت سے رجوع کیامگر مقامی عدالت نے بھی خاتون کی درخواست خارج کی انہوں نے عدالت سے استدعا کی کہ مقامی عدالت کے فیصلے کو کالعدم قرار دیا جائے اور خاتون کے شوہر کے خلاف ضابطہ فوجدری کی دفعہ 561(اے) کے تحت کاروائی کی جائے جس پر جسٹس اکرام اللہ نے وکیل سے استفسار کیا کہ پٹھان تو دو دو شادیاں کرتے ہیں،کس کتاب میں لکھا ہے کہ پہلی بیوی سے اجازت لینا ضروری ہے جس پر درخواست گزارہ کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ نئے قانون کے مطابق اب دوسری شادی کے لئے پہلی بیوی سے تحریری اجازت لینا ضروری ہے عدالت نے ابتدائی دلائل کے بعد خاتون کے شوہر کو نوٹس جاری کرتے ہوئے اگلی سماعت پر جواب طلب کر لیا۔