اثاثہ جات اور منی لانڈرنگ کیس،شہباز شریف کی عبوری ضمانت میں 17اگست تک توسیع

  اثاثہ جات اور منی لانڈرنگ کیس،شہباز شریف کی عبوری ضمانت میں 17اگست تک توسیع

  

لاہو(نامہ نگار خصوصی)لاہور ہائیکورٹ نے آمدنی سے زائد اثاثہ جات اور منی لانڈرنگ کیس میں قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف میاں، شہباز شریف کی عبوری ضمانت قبل از گرفتار ی میں 17 اگست تک توسیع کردی ہے،گزشتہ روز میاں شہباز شریف کی درخواست ضمانت کی سماعت کرنے والے ڈویژن بنچ کے سربراہ مسٹر جسٹس شہرام سرور چودھری نے یہ کہہ کر کیس کی سماعت سے معذرت کرلی کہ ان کے میاں شہباز شریف کے وکیل اعظم نذیر تارڑ سے ذاتی مراسم ہیں،مسٹرجسٹس شہرام سرور چودھری اور مسٹرجسٹس طارق سلیم شیخ پر مشتمل ڈویژن بنچ نے شہباز شریف کی درخواست ضمانت کی مزید سماعت کے لئے 17اگست کی تاریخ مقرر کرتے ہوئے کیس کی فائل چیف جسٹس کو بھجوا دی تاکہ اس کی سماعت کے لئے نیا بنچ تشکیل دیا جاسکے۔میاں شہباز شریف اپنے وکلاء کے ہمراہ عدالت میں پیش ہوئے، انہوں نے فاضل بنچ سے کہا کہ میں قومی اسمبلی میں اپوزیشن کا لیڈر ہوں، نیب کومجھ سے جو پوچھنا ہے ابھی پوچھ لیں،میں کینسر کا مریض ہوں، مجھے علاج کے لئے بیرون ملک جانا پڑتا ہے، میں لندن میں تھااوربیماری کی پرواکئے بغیرخود پاکستان آیا، نیب کی انکوائریاں اور عدالت کی پیشیاں بھگتیں،مجھ سے نیب کے 7افسروں نے تفتیش کی اور کہا کہ انکوائری مکمل ہوگئی ہے، تفتیشی افسران نے مزید کچھ نہیں پوچھنا مگر پھر بلایا جا رہا ہے، حلفاً کہتا ہوں کہ تفتیشی افسروں نے مجھے ایسا کہاتھا،مسٹر جسٹس شہرام سرور چودھری نے کہا کہ ان کے اعظم نذیرتارڑ سے ذاتی مراسم ہیں اس لئے مناسب نہیں کہ وہ اس کیس کی سماعت کریں،درخواست میں موقف اختیار کیا گیاہے کہ نیب کے پاس ان کے خلاف کوئی ثبوت نہیں،انکوائری میں نیب کی جانب سے لگائے گئے الزامات عمومی نوعیت کے ہیں، 2018ء میں جب گرفتارکیاگیا تواس کے بارے میں بھی تحقیقات ہوئی تھیں،تواتر سے تمام اثاثے ڈکلیئر کرتا آ رہا ہوں، منی لانڈرنگ کے الزامات بھی بالکل بے بنیاد ہیں، نیب انکوائری کے دوران اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ کے اختیارات استعمال نہیں کر سکتا، نیب انکوائری دستاویزی نوعیت کی ہے اور تمام دستاویزات پہلے سے ہی نیب کے پاس موجود ہیں،ضمانت قبل ازگرفتاری منظور کی جائے،میاں شہباز شریف کی پیشی کے موقع پر مسلم لیگ (ن) کے کارکنوں کی بڑی تعداد لاہورہائی کورٹ میں موجود تھی،میاں شہباز شریف کے کیس کے پیش نظر لاہورہائی کورٹ میں سیکیورٹی کے سخت انتظامات کئے گئے تھے۔

منی لانڈرنگ کیس

لاہو(نامہ نگار خصوصی)پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر اور قائد حزب اختلاف میاں شہباز شریف نے کہاہے کہ نیب ایک متنازعہ ادارہ ہے،اس بات کوادارے بھی تسلیم کررہے ہیں، سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد نیب کا کردار عوام کے سامنے آ چکا ہے، سپریم کورٹ کے تفصیلی فیصلے سے خواجہ برادران کی ضمانت کی حد تک بریت ہوئی ہے،حکومت کی ایماء پر مسلم لیگ (ن)کو سیاسی انتقام کا نشانہ بنایاجارہاہے، لاہورہائی کورٹ میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ عید الاضحی کے بعد آل پارٹیز کانفرنس ہو گی،کورونا پر قابو پانے کے لئے حکومتی اقدامات کے حوالے سے پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ میں اس وقت قانون دانوں میں گھراہوا ہوں جب سیاستدانوں میں ہوں گاتو بات کروں گا،انہوں نے کہا کہ عدالت کے احترام میں ہائی کورٹ آیاہوں،میرے وکلاء کا بھی یہی مشورہ تھا اور میری منشا بھی یہی تھی۔

شہباز شریف

مزید :

صفحہ اول -