اجتماعی یا انفرادی قربانی کی بحث موجودہ حکمرانوں کی نااہلی کا نتیجہ

اجتماعی یا انفرادی قربانی کی بحث موجودہ حکمرانوں کی نااہلی کا نتیجہ

  

اے این پی کے مرکزی رہنما غلام احمد بلور نے کہا ہے اگر دیکھا جائے تو جب سے موجودہ حکومت آئی ہے تواس نے عوام پر سوائے پابندیاں لگانے کے عملی طور پر کچھ نہیں کیا، ہر ایشو پر حکومت کی یہ کوشش ہوتی ہے وہ عوام کو کوئی سہولت دینے کی بجائے الٹا ان کو تنگ کرے، اگر حکومت کورونا کو کنٹرول کر لیتی تو شاید آج ہمیں اس سوال پر بحث کی ضرورت ہی پیش نہ آتی کہ اجتماعی قربانی کو فروغ دیا جائے،وہ ایشو آف دی ڈے میں اظہار خیال کررہے تھے۔ان کا کہنا تھا کوروناسے متعلق پہلے دن سے ہی وزیر اعظم نے خود عوام کو شکوک و شہبا ت میں مبتلا کیا وہ تو اس ایشو پر کوئی سنجیدہ بیان نہیں دے سکے، سنجیدہ پالیسی بنانے کی ان سے کوئی امید کرنا تو بڑی دور کی بات ہے، عوام کو جس قدر انہوں نے مہنگائی کی چکی میں پیسا ہے اس سے تو ویسے ہی عوام کی انفرادی قربانی کرنے کی سکت ختم ہو کررہ گئی ہے۔تاہم کورونا وباء کے دوران عوام کو انفرادی کی بجائے اجتماعی قربانی کو ترجیح دے کر خود اور اپنے پیاروں کو وائرس سے محفوظ رکھنے کی ہر ممکن کوشش کرنا چاہیے۔

غلام بلور

مزید :

صفحہ اول -