بڑی مشکل ہے، ڈاکٹرز دیہات میں نہین جاتے، یاسمین راشد کی پنجاب اسمبلی میں بے بسی

  بڑی مشکل ہے، ڈاکٹرز دیہات میں نہین جاتے، یاسمین راشد کی پنجاب اسمبلی میں ...

  

لاہور(نمائندہ خصوصی) پنجاب اسمبلی کا اجلاس دو گھنٹے کی تاخیر سے پینل آف چیئر مین میاں محمد شفیع کی صدارت میں ہوا۔اجلاس کے آغاز پر صرف11ممبران ایوان میں موجود تھے۔صوبائی وزیر صحت یاسمین راشد نے سوال کے جواب میں کہا کہ کتا کاٹنے کی ویکسین پنجاب کے تمام اضلاع میں موجود ہے تاہم انہوں نے اعتراف کیا کہ دیہاتی علاقوں میں ڈاکٹرز نہیں جاتے ہمیں بڑی مشکل کا سامنا ہے۔ چند ایک اضلاع کے گاوں میں بڑی مشکل سے اسپیشلسٹ ڈاکٹرز تعینات کیے ہیں۔ ن لیگی رکن اسمبلی افتخار چھچھر نے کہا کہ محکمہ کی جانب سے جو ایوان میں جواب دیا گیا وہ غلط ہے جس پر چیئر مین نے کہا کہ منسٹر صاحبہ انکوائری کرکے رپورٹ ایوان میں پیش کریں۔وقفہ سوالات کے بعد صوبائی وزیر قانون راجہ بشارت نے ایوان میں ڈیزاسٹر مینجمنٹ آرگنائزیشن پنجاب کی آڈٹ رپورٹ سال 2018 -19 ایوان میں پیش کر دی۔ میاں اسلم اقبال نے تحریک التوا کار پر جو اب دیتے ہوئے کہا کہ صوبے میں بوائلر انسپکٹرز کی تعددا کم ہونے اور بوائلر انسپکشن کی سطح پر کرپشن ہونے کی شکایات موصول ہوئی ہیں۔ راجہ بشارت نے کہا کہ ملک کے دوسرے صوبوں سے ڈور پنجاب سمگل کی جا رہی ہے۔ پنجاب میں پتنگ بازوں اور پتنگ سازوں کے خلاف کاروائی کی جا رہی ہے۔پنجاب اسمبلی کے اجلاس میں ''تحفظ بنیاد اسلام ایکٹ پر بحث کا آغاز کرتے ہوئے مسلم لیگ ن کے رکن اسمبلی مولانا الیاس چینوٹی نے کہا کہ فارم کی طرح قومی شناختی کارڈ میں بھی مذہب کے خانے کا اضافہ کیا جائے۔وفاقی حکومت سے سفارش کی جائے شناختی کارڈز میں مذہب کا خانہ شامل کیا جائے۔صوبائی وزیر پراسکیوشن چوہدری ظہیر الدین نے کہا کہ ایوان نے جس طرح تحفظ بنیاد اسلام بل منظور کیا اسی طرح اس پر عملدرآمد کو یقینی بنایا جائے۔ پنجاب اسمبلی حکومتی رکن اسمبلی نذیر احمد چوہان نے ایوان میں بل میں مزید تجاویز پیش کرنے کا مطالبہ کیا جس پرراجہ بشارت نے روک دیا اور کہا کہ تحفظ بنیاد اسلام بل منظور کر لیا گیا اس کو تبدیل نہیں کیا جائے گا۔بل کو بغیر پڑھے اور سمجھے اس میں تبدیل یا ترمیمی کی تجاویز دینامناسب نہیں ہے۔ اجلاس کا ایجنڈا مکمل ہونے پر اجلاس آج موخہ 24جولائی بروز جمعہ صبح9بجے تک ملتوی کردیا گیا۔

پنجاب اسمبلی

مزید :

صفحہ آخر -