ایبٹ آباد،عید قربان پر کورونا وائرس،سیکورٹی پلان ترتیب

ایبٹ آباد،عید قربان پر کورونا وائرس،سیکورٹی پلان ترتیب

  

ایبٹ آباد (ڈسٹرکٹ رپورٹر)ہزارہ پولیس نے عید الاضحی کے موقع پر ہزارہ میں امن و امان اور کرونا وائرس پر قابو پانے کے لئے سیکورٹی پلان ترتیب دے دیا ہے اور حکومتی احکامات کی پاسداری کرنے کے لئے ہزارہ بھر کے تما م اضلاع میں 7 ہزارہ سے زاہد پولیس اہلکاروں کو تعینات کرنے اور صورتحال کو قابو میں رکھنے کی پلاننگ کی ہے۔ ان اہلکاروں میں آپریشنل سٹاف کے ساتھ ساتھ ٹریفک وارڈن، ایلیٹ فورس،ایکس سروس مین اور لیڈیز پولیس اہلکار بھی شامل ہے۔ اس حوالے سے ڈی آئی جی قاضی جمیل الرحمن نے ڈی پی اوز کو ہدایت دیتے ہوئے کہا کہ ہزارہ پولیس کی بھرپور کوشش ہونی چاہیے کہ حکومتی احکامات کی پاسداری کروائی جائے مویشی منڈیوں اور بازاروں میں لوگوں کے درمیان فاصلہ کو یقینی بنایا جائے ہزارہ بھرکی تمام مویشی منڈیوں پر پولیس کی تعیناتی کی جائے، لوگوں کو حفاظتی احکامات پر عمل درآمد کروانے کو یقینی بنائیں اور لوگوں سے گزارش ہے کہ ہزارہ پولیس کے ساتھ مکمل تعاون کریں۔ عوامی مفاد کے لئے مویشی منڈیاں شہر سے باہر لگائی گئی ہیں تاکہ وائرس پر قابو پایا جا سکے اس لئے ہماری زمہ داری ہے کہ ہم اپنے اداروں کے ساتھ ملکر عالمی وباء سے خود بھی محفوظ رہیں اور دوسروں کو بھی اس کی تلقین کریں۔سفید پرچات میں پویس اہلکاروں کی ٹیمیں مویشی منڈیوں میں لگائی جائیں جو کہ مشکوک و جرائم پیشہ افراد پر کڑی نگرانی رکھیں تاکہ کسی بھی شریف شہری کو مالی نقصان سے بچایا جا سکے۔ڈی پی اوز کو مزید ہدایات دیتے ہوئے ڈی آئی جی ہزارہ نے کہا کہ ڈی پی اوز عید سیکیورٹی پلان کی خود مانیٹرنگ کریں تاکہ اس کو اچھے انداز سے عملی جامہ پہنایا جاسکے۔ایس ڈی پی اوز اپنے اپنے سرکل میں بازاروں، خرید و فروخت کی جگہوں، شہر کی بڑی مساجد کا وقتا فوقتاً دورہ کرکے سیکیورٹی صورتحال کا جائزہ لیں اور لو گوں کو ماسک پہننے کا پابند بناتے ہوئے سماجی فاصلہ کو قائم رکھیں۔کرونا وائرس کے خلاف جاری اس جنگ میں حکومتی احکامات کی خلاف ورزی کرنے والے افراد کے خلاف کاروائیوں کو جاری و ساری رکھا جائے۔ ٹریفک سٹاف ٹریفک کی روانی کو برقرار رکھنے کیلئے بہترین حکمت عملی اپناتے ہوئے عوام کو ٹریفک کے متعلق درپیش مسائل کو دور کریں اورمسافروں کیساتھ اچھے اخلاق سے پیش آئیں،جو ٹرانسپورٹرز حکومتی احکامات کی خلاف ورزی کریں قانون کے مطابق انکے خلاف عملی کارروائی کی جائے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -