دنیا کا وہ علاقہ جہاں شیروں کی حفاظت کیلئے کتے تعینات کر دیئے گئے

دنیا کا وہ علاقہ جہاں شیروں کی حفاظت کیلئے کتے تعینات کر دیئے گئے
دنیا کا وہ علاقہ جہاں شیروں کی حفاظت کیلئے کتے تعینات کر دیئے گئے

نئی دلی (نیوز ڈیسک) بھارت میں جنگلی شیروں کو شکاریوں سے بچانے کے لئے ایک نئی فورس قائم کر دی گئی ہے جس کے ارکان 14 کتوں  نے اپنی تربیت مکمل ہونے پر ایک خصوصی تقریب میں پاسنگ آﺅٹ پریڈ کا مظاہرہ کیا۔ 

مزیدپڑھیں:دنیا کا وہ پہاڑ جہاں لوگ ون وے ٹکٹ کٹوا کر خودکشی کیلئے جاتے ہیں 

ریاست مدھیا پردیش کے شہر بھوپال میں منعقد ہونے والی تقریب کے بعد تربیت پانے والے جرمن شیپرڈ کتوں کو محکمہ جنگلات اور پولیس میں ذمہ داریاں سر انجام دینے کے لئے تعینات کر دیا گیا۔ تقریب میں کتوں کے ساتھ ان کے 28 ہینڈلرز نے بھی شرکت کی۔ نئے دستے کی تربیت مکمل ہونے کے بعد شیروں کی حفاظت کےلئے تیار کئے جانے والے کتوں کی تعداد دوگنا ہو گئی ہے۔

ان کتوں کو نا صرف شکاریوں کا سراغ لگانے کی تربیت دی گئی ہے بلکہ یہ شیروں کی کھال اور ہڈیوں وغیرہ سے تیار کی گئی اشیاءکا بھی سونگھ کر پتا چلا سکیں گے۔ یہ زخمی جانوروں کا بھی سراغ لگا سکیں گے تا کہ وائلڈ لائف حکام ان تک مدد پہنچا سکیں۔ تربیت مکمل کرنے والے کتوں کو ان سات ریاستوں میں تعینات کیا جائے گا جہاں جنگلی شیروں کی سب سے بڑی تعداد پائی جاتی ہے، ان میں مدھیا پردیش، آسام، اتراکھنڈ، مہاراشٹرا تامل ناڈو، جھاڑکھنڈ اور کرناٹکا شامل ہیں۔

بھارت میں شیروں کا غیر قانونی شکار ایک سنجیدہ مسئلہ بن چکا ہے اور نایاب جانوروں کی نسل خطرے سے دوچار ہو چکی ہے۔ شیروں کو عام طور پر ان کی ہڈیوں اور دیگر اعضاءکے حصول کے لئے شکار کیا جاتا ہے۔ یہ ہڈیاں اور اعضاءروایتی دیسی ادویات میں استعمال کئے جاتے ہیں۔ بھارت میں صرف 2013 کے دوران 39 نایاب شیروں کا غیر قانونی شکار کیا گیا۔ انٹرپول کے مطابق غیر قانونی شکار کے بین الاقوامی کاروبار کا حجم تقریباً 20 ارب ڈالر ہے۔

 

مزید : ڈیلی بائیٹس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...