آسٹریلیاکا حزب اللہ کو بدستور بلیک لسٹ رکھنے کا فیصلہ

آسٹریلیاکا حزب اللہ کو بدستور بلیک لسٹ رکھنے کا فیصلہ

دبئی(آن لائن)برطانوی اخبار "گارجین" نے اپنی رپورٹ میں بتایا ہے کہ آسٹریلیا کی حکومت نے لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے بیرون ملک سرگرم گروپ کو دہشت گردی کی کارروائیوں میں ملوث ہونے کی پاداش میں بدستور بلیک لسٹ رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔رپورٹ کے مطابق آسٹریلوی سیکیورٹی ایجنسی کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ حزب اللہ کے زیرانتظام بیرون ملک سرگرم تنظیم بدستور دہشت گردی کی کارروائیوں میں ملوث پائی گئی ہے۔ اس تنظیم کی جانب سے آسٹریلیا سمیت کئی دوسرے ملکوں میں اپنے حامی شدت پسند گروپوں کی مدد سے دہشت گردانہ حملے کیے اور بعض کی منصوبہ بندی کی گئی۔اخبار لکھتا ہے کہ آسٹریلوی پارلیمنٹ کے زیرانتظام انٹیلی جنس وسیکیورٹی کمیٹی نے حزب اللہ کے بیرون ملک سرگرم گروپ کو دہشت گرد تنظیموں کی فہرست میں شامل رکھنے کا فیصلہ کیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق کمیٹی نے سنہ 2003ء کے فیصلے کو برقرار رکھتیہوئے حزب اللہ کے بیرون ملک گروپ کو بدستور بلیک لسٹ رکھا ہے۔گارجین کے مطابق آسٹریلوی انٹیلی جنس کا کہنا ہے کہ حزب اللہ کا بیرون ملک سرگرم گروپ ارجنٹائن، بلغاریہ کے شہربورگاس میں اسرائیلی یہودیوں پر حملوں کے ساتھ آسٹریلیا میں اپنے ایجنٹ بھرتی کرنے جیسے جرائم کا مرتکب رہا ہے۔ اس لیے اسے بدستور بلیک لسٹ رکھا جائے گا۔خیال رہے کہ آسٹریلیا نے لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے بیرون ملک سرگرم گروپ کو دہشت گردی کی کارروائیوں کے الزام میں سنہ 2003ء میں بلیک لسٹ قرار دیتے ہوئے اس پر پابندی عاید کی تھی۔ اگرچہ یہ پابندی عبوری نوعیت کی ہے تاہم اس میں پچھلے کئی سال سے مسلسل توسیع کی جا رہی ہے۔

مزید : عالمی منظر