وہ مچھلی جو کسی بھی مردکیلئے بھیانک خواب سے کم نہیں

وہ مچھلی جو کسی بھی مردکیلئے بھیانک خواب سے کم نہیں
وہ مچھلی جو کسی بھی مردکیلئے بھیانک خواب سے کم نہیں

شکاگو (نیوز ڈیسک) اگر آپ مچھلی کے شکار کے شوقین ہیں یا قدرتی جھیل یا دریا میں تیراکی کا شوق رکھتے ہیں تو امیزون کے دریاﺅں سے تعلق رکھنے والی بدشکل پاکو مچھلی کو یاد رکھئے گا کہ یہ مردوں کی مردانگی کی دشمن ہے۔

پاکو کا اصل وطن تو برازیل ہے لیکن یہ دیگر کئی ممالک میں بھی پائی جاتی ہے اور کبھی کبھار تو انتہائی غیر متوقع جگہوں پر بھی رونما ہو جاتی ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ پاکو مچھلی کے دانت انسانی دانتوں جیسے نظر آتے ہیں اور یہ خاص طور پر پانی میں موجود مردوں کے نازک اعضاءپر حملہ کرتی ہے اور انہیں نوچ کر لمحوں میں غائب ہو جاتی ہے۔ غیر مصدقہ رپورٹوں کے مطابق اب تک درجنوں ملاح اور مچھلی کے شکاری اس خوفناک آبی عفریت کے ہاتھوں اپنی مردانگی سے محروم ہو چکے ہیں۔

امیزون دریا میں پائی جانے والی پاکو مچھلی کی لمبائی تقریباً 4 فٹ تک ہوتی ہے اور یہ سخت سے سخت اشیاءکو بھی اپنے مضبوط دانتوں سے پیس کر رکھ دیتی ہے۔ اس مچھلی کی مقبولیت کی وجہ سے اسے بعض لوگ پالتو مچھلی کے طور بھی رکھتے ہیں اور یہی وجہ ہے کہ یہ اب برازیل کے علاوہ آسٹریلیا، امریکا، برطانیہ، یورپی اور ایشیائی ممالک میں بھی دیکھنے میں آتی ہے۔ پاپوا نیو گنی میں یہ خبریں بھی سامنے آ چکی ہیں کہ پاکو مچھلی نے دو مردوںکے مخصوص اعضاءکاٹ ڈالے اور کثرت سے خون بہہ جانے کی وجہ سے دونوں موت کے منہ میں چلے گئے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...