رکن پارلیمنٹ نے اپنی بچی کو دودھ پلاتے پلاتے ایسا کام کردیا کہ تاریخ رقم ہوگئی، لیکن لوگ اس بات کو پسند کرنے کی بجائے برا بھلا بولنے لگے، ایسا کیا کیا تھا؟ جانئے

رکن پارلیمنٹ نے اپنی بچی کو دودھ پلاتے پلاتے ایسا کام کردیا کہ تاریخ رقم ...

  

کنبرا(مانیٹرنگ ڈیسک) کسی بھی ملک کی پارلیمنٹ میں آج تک کسی خاتون رکن نے اپنے بچے کو دودھ نہیں پلایا تھا لیکن ایک ماہ قبل آسٹریلوی خاتون سینیٹر لاریسا واٹرز نے اسمبلی سے خطاب کے دوران اپنی 2ماہ کی بچی کو دودھ پلا کر یہ کام بھی کر ڈالا۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق آسٹریلوی پارلیمنٹ نے اپریل میں خواتین اراکین اسمبلی کو دوران اجلاس اپنے بچوں کو دودھ پلانے کی اجازت دی تھی، جس کے بعد پہلی بار لاریسا نے اپنی بیٹی کو دودھ پلایا۔ تاہم جہاں دنیا بھر میں بہت سے لوگوں نے ان کے اس کام کو سراہا ہے وہیں انہیں شدید تنقید کا سامنا بھی کرنا پڑ رہا ہے۔

بدترین نشے کرنے کے بعد عجیب و غریب شخص کی مگرمچھ کے ساتھ زیادتی کی کوشش ناکام، مگر کیسے؟ انتہائی شرمناک ترین خبر آ گئی

کوئنز لینڈ سے گرینز پارٹی کے ٹکٹ پر منتخب ہونے والی لاریسا واٹرز کا کہنا تھا کہ ”جب سے میں نے اسمبلی کے فلور پر اپنی بیٹی ایلیا کو دودھ پلایا ہے، تب سے انٹرنیٹ پر مجھے شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔“ لاریسا نے موصول ہونے والے ایک پیغام کا سکرین شاٹ لے کر اپنے ٹوئٹر ہینڈل پر پوسٹ کیا ہے جس میں لاریسا کے متعلق انتہائی غلیظ زبان استعمال کی گئی ہے۔ پیغام میں لکھا گیا ہے کہ ”لاریسا نے انتہائی گھٹیا حرکت کی ہے اور وہ سیاست کی تاریخ میں ہمیشہ کے لیے ’احمق کتیا‘ کے نام سے یاد رکھی جائے گی۔ یہ کام کرنا اس کی بدقسمتی تھی۔“لاریسا کا کہنا تھا کہ ”ایسے لوگوں کے ساتھ ساتھ مجھے ایسے پیغامات بھی بے شمار آئے جن میں میرے کام کی تعریف کی گئی اور لوگوں نے آئندہ بھی پارلیمنٹ میں اپنی بچی کو دودھ پلانے کے لیے میری حوصلہ افزائی کی۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -