انڈسٹری کی بحالی کیلئے بجلی کی قیمتوں میں کمی کا اطلاق ایک سال کیلئے کیا جائے،خُرم آفتاب

انڈسٹری کی بحالی کیلئے بجلی کی قیمتوں میں کمی کا اطلاق ایک سال کیلئے کیا ...

  

لاہور (کامرس رپورٹر) فیڈریشن آف پاکستان چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کی ریجنل سٹینڈنگ کمیٹی برائے لیدر اینڈ لیدر گڈز کے وائس چےئرمین و ممتاز صنعتکار خُرم آفتاب نے کہاہے کہ انڈسٹری کی بحالی کیلئے بجلی کی قیمتوں میں کمی کا اطلاق ایک سال کیلئے کیا جائے، پاکستان میں اداروں کو مضبوط کیا جائے ،انڈسٹری اور حکومتی ادارے حقیقی کاروباری نمائندہ اداروں سے منسلک ہونے چاہییں۔پاکستان کا مستقبل روشن اور تابناک ہے پوری دنیا کی نظریں پاکستان پر لگی ہوئی ہیں ،تمام ممالک کے سرمایہ کاروں اور کاروباری افراد کو دعوت ہے کہ پاکستان آئیں اور کاروبار کریں۔یہ بات انہوں نے گزشتہ روز مقامی ہوٹل میں منعقدہ ایک تقریب کے دوران شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

انہوں نے کہاکہ پاکستان میں لیدر، لیدر مصنوعات، زراعت ، مائنزاینڈ منرل، سپورٹس گڈز، فوڈ، ٹیکسٹائل، ویجیٹیبل، فروٹ، میڈیکل اینڈ آرتھوپیڈک ایمپلائنس سمیت دیگر بے شمار شعبوں میں سرمایہ کاری اور کاروباری سرگرمیوں کو فروغ دینے کی خاطرخواہ گنجائش موجود ہے ۔ہم پوری دنیاکے تاجروں اور صنعتکاروں کو ہر طرح کی سہولت فراہم کریں گے ۔تاہم حکومت کو چاہیے کہ ترجیحی بنیادوں پر توانائی کے بحران کا مسئلہ حل کرے اور امن و عامہ اور ہراسمنٹ کی صورتحال کا خاتمہ کیا جائے ۔اس کے ساتھ ساتھ حکومت کو طویل المدت معاشی و اقتصادی پالیسیوں کو بنایا جائے ، انہوں نے کہاکہ بجلی کی قیمتوں میں کمی کا اطلاق ایک ماہ کی بجائے یک سالہ کیا جائے ، کیونکہ پاکستان میں توانائی کی قلت کی وجہ سے پیداواری لاگت کئی گنا بڑھ چکی ہے اور صنعتکاروں کیلئے غیر ملکی آڈرز پورے کرنا مشکل ہو چکے ہیں،انہوں نے کہاکہ برآمدات میں کمی کی ایک بڑی وجہ توانائی کا بحران بھی ہے ، انہوں نے کہاکہ عالمی منڈی میں تیل کی قیمتیں 110 ڈالر فی بیرل سے کم ہو کر 26 ڈالر فی بیرل پر آچکی ہیں حکومت کو چاہیے کہ وہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں مزید کمی کا اعلان کرے ، تاکہ عوام کو زیادہ سے زیادہ ریلیف مل سکے۔ انہوں نے کہاکہ حکومت کی پالیسیوں میں تسلسل نہ ہونے کی وجہ سے کاروباری برادری کو شدید تحفظات لا حق ہیں ،طویل المدت حکومتی پالیسیوں سے ہی ملک کے معاشی و اقتصادی حالات میں بہتری لائی جا سکتی ہے۔

مزید :

کامرس -