جہلم،ریلوے کالونی کی رہائش گاہیں کھنڈر بن گئیں،مکین پریشان

جہلم،ریلوے کالونی کی رہائش گاہیں کھنڈر بن گئیں،مکین پریشان

  

جہلم( نامہ نگار)جہلم ریلوے کالونی کے کئی دھائیوں پرانے ریلوے ملازمین کی سرکاری رہائش گاہیں 25 سال سے تعمیر و مرمت نہ ہونے کیوجہ سے رہائش کیلئے ناکارہ ہوچکی ہیں ریلوے ملازمین مہنگائی کے اس پرفتن دور میں کرائے کی عمارتوں میں رہنے پر مجبور ، کھنڈر بنی عمارتیں نشئیوں اور مویشیوں کی آماجگاہ میں تبدیل،ریلوے حکام نے آنکھیں بندکر لیں، تفصیلات کے مطابق کئی دھائیوں قبل انگریز دور میں تعمیر ہونے والے جہلم کے ریلوے ا سٹیشن سے ملحقہ ریلوے ملازمین کی رہائش گاہیں 25 سال سے زائد کا عرصہ گزر جانے کے باوجود تعمیر و مرمت نہ ہو سکے جس کی وجہ سے ریلوے کالونی میں موجود درجنوں رہائش گاہیں ناکارہ ہو چکی ہیں ، کھنڈر بنی ملازمین کی رہائش گاہوں کی کھڑکیاں ، دروازے تک چوری ہو چکے ہیں اور ریلوے کالونی میں اگنے والی جڑی بوٹیاں جنگل کی منظر کشی کر رہی ہیں ۔ جہاں ریلوے ملازمین نے رہائش اختیار کرنے کی بجائے مویشی باندھنے شروع کر رکھے ہیں ، ریلوے ملازمین محفوظ رہائش گاہیں نہ ہونے کی وجہ سے اب کرائے کی عمارتوں میں رہنے پر مجبورہیں ، کھنڈربن جانے والی رہائش گاہوں میں نشہ کرنے والے نشئیوں نے ڈیرے قائم کر لئے ہیں جس کی وجہ سے شہری رات کے وقت ریلوے کالونی کے نزدیک گزرنا گوارہ نہیں کرتے ، ریلوے ملازمین کا کہنا ہے کہ پاکستان کے سب سے بڑے ادارے کے ملازمین کی تباہ شدہ رہائش گاہوں کی تعمیر و مرمت نہ ہونے کی وجہ سے کروڑوں روپے مالیت کی عمارتیں تباہی کا منظر پیش کر رہی ہیں اگر ریلوے کے ارباب اختیار ریلوے کالونیوں پر توجہ دیں تو ملک بھر کے سینکڑوں ملازمین کو فائدہ پہنچ سکتا ہے ، ریلوے ملازمین نے وزیراعظم میاں محمد نواز شریف، وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق سے ان معاملات کا نوٹس لیکر کارروائی کرنے کامطالبہ کیاہے۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -