عید الفطر آمد،صوابی کے چھوٹے بڑے بازاروں میں رش بڑھ گیا

عید الفطر آمد،صوابی کے چھوٹے بڑے بازاروں میں رش بڑھ گیا

  

یارحسین (رپورٹ سیدابدال باچاسے)رمضان المبارک کی آخری عشرے اور عیدالفطرکی آمدکے ساتھ ضلع صوابی کے تمام چھوٹے بڑے بازاروں اور شاپنگ سینٹروں میں رش بڑھ رہاہے اسی طرح تجاوزات کی بھرمار ،ریڑھی بانوں کے قبضے جگہ جگہ گندگی کے ڈھیر عیرقانونی ٹرانسپورٹ سٹینڈ دوکاندارں اور گاہکوں کی زندگی اجیرن بن گئی بازاروں سے چلنا محال انتظامیہ لمبی نیند سو گئی بازاروں میں ٹریفک جام معمول کا حصہ فٹ پاتھوں میں چلنے کی بجائے دوکانیں سج گئی اسی طرح ضلع صوابی میں عید کی خریداری عروج پر پہنچ گئی بازاروں اور مارکیٹوں کے رونقیں بحال ہو گئی لوگوں کی بڑی تعداد عید کی خریداری کے لئے بازاروں کا رخ کررہی ہے تا ہم ملبوسات سمیت اور دیگر اشیا کی قیمتوں میں اضافے سے عوام پریشان ہیں افطاری کے بعد رات دیر تک بازاروں میں خریداری کا رش لگ گیا ہے اور حاص کر خواتین بچے عید کی خریداری میں مصروف ہے اس سلسلے میں سیاسی و سماجی شخصیت خاجی فرقت بریال، مقبول باچا،اویس خان،شوکت علی،گل رحیم،یاسین خان، توصیف پرنس،ذیشان خان اور دیگر نے کہا کہ انتظامیہ گرانفروشوں کے حلاف کاروائی نہیں کر رہی اس کے علاوہ درزیوں نے بھی عید کے موقع پر قینچیاں تیز کردی تھیں جس سے عام آدمی عاجز آگئے عید کے مبارک موقع پر بے رحم درزیوں نے مہنگائی کا طوفان برپا کئے ہر درزی کا اپنا اپنا ریٹ ہے اور 600سے زئد فی جوڑا سلائی لیتے رہیں جس سے درزیوں نے عوام کا جینا محال کیا اس کے علاوہ تجارتی مراکز میں خریداروں کے ساتھ جیب کترے متحرک اور ان مرد جیب تراشوں کے گروہ میں پیشہ ور بچے سرگرم عمل ہے اور کئی افراد کے جیب صاف کردئیے اور اس کے ساتھ ہی بازاروں میں جعلی کرنسی پھیلانے والوں نے موقع سے فائدہ اٹھانے والوں نے 500اور1000روپے کے نوٹ بازاروں میں گردش کرنے لگے جبکہ بازاروں میں مضرصحت گوشت اور قیمے کی کھلے عام فروحت عوام کے لئے عذاب بن گئی ہے اور لوگ بیمار ہو کر ہسپتالوں کا رح کر نے لگے ہیں جبکہ قصابوں اپنے گھروں میں مذبح خانے بنارکھے ہیں قصائی اپنی مرضی سے لاغر جانوروں کو خرید کر گھروں میں ذبحہ کرکے بغیر چیک گوشت فروحت کررہے ہیں جو انسانی جسم صحت کے مترادف ہے بھیکاریوں کے بھرمار نے عوام کے لئے عیدالفطر کی خریداری مشکل بنا دیا ہے بازاروں اور کاروباری مراکز ،گلی محلوں، مساجد،ہسپتالوں اور یہاں تک کہ لوگوں کے گھروں تک دستک دیکر بھیک بٹوارہی ہے عید قریب آنے پر خلوائیوں نے مٹھائیوں کے قیمتوں میں اضافہ کردیا ہے وہی غیرمعیاری مٹھائیاں فروحت کی جارہی ہے اس کے علاوہ چاند رات کے موقع پر ہوائی فائرنگ اور چائنا پٹاہوں کے روک تھام کے خلاف جہاد کی اشد ضرورت ہے کیوں کہ ہر سال چاند رات اور عید کے دن کے موقع پرہوائی فائرنگ سے درجنوں افراد زخمی اور کئی افراد موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں اور ہوائی فائرنگ کے روک تھام کے لئے ہم سب کو مشترکہ کوشش کرنی ہوگی اور ہر سطح پر ہوائی فائرنگ کرنے والوں کی حوصلہ شکنی کرنی ہوگی لھٰذا صوبائی حکومت اور ضلعی انتظامیہ کو اس سلسلے میں حصوصی انتظامات کرنی چاہیے اس سلسلے میں DPOصوابی صہیب اشرف صاحب اس بے رحم روایات کو ختم کرنے کے لیے موثر اقدامات کرنی چاہیے

مزید :

پشاورصفحہ آخر -