کاشتکاروں کو کپاس کی فصل کو پتا مروڑ وائرس سے بچانے کیلئے زہروں کاا نتخاب محکمہ زراعت کے مشورے سے کرنے کی ہدایت 

کاشتکاروں کو کپاس کی فصل کو پتا مروڑ وائرس سے بچانے کیلئے زہروں کاا نتخاب ...

فیصل آباد (بیورورپورٹ) محکمہ زراعت کے زرعی ماہرین نے کہا ہے کہ کپاس کی فصل کو سفید مکھی کے حملے سے بچانے اور اس کے مؤثر تدارک کیلئے زہروں کا انتخاب محکمہ زراعت کے مشورے سے کیا جائے جبکہ بیماری کے حملے سے بچاؤ کیلئے صبح یا شام کے وقت قطاروں میں ہالو کون نوزل سے سپرے کے ذریعے مثبت نتائج حاصل کئے جاسکتے ہیں۔ ایک ملاقات کے دوران محکمہ زراعت فیصل آباد ڈویژن کے ترجمان نے بتایا کہ سفید مکھی کپاس کی فصل کا رس چوسنے والا انتہائی خطرناک کیڑا ہے جو پتہ مروڑ وائرس کو پھیلانے میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔ اس کے بالغ اور بچے پتوں سے رس چوس کر پودوں کو کمزور کر دیتے ہیں۔ 

سفید مکھی کے بچے رس چوسنے کے عمل کے دوران پتوں پر میٹھی لیس اور رطوبت خارج کرتے رہتے ہیں جس پر سیاہ رنگ کی اُلی اگ آتی ہے نتیجتاً پودوں کے خوراک بنانے کا عمل بری طرح متاثر ہوتا ہے۔ انہوں نے ہدایت کی کہ کپاس میں پودوں کی چھدرائی وقت پر کریں اور پودوں کے درمیان مناسب فاصلہ رکھیں تاکہ سفید مکھی کالونی نہ بنا سکے۔ کاپس کے کھیتوں اور گرد و نواح میں موجود جڑی بوٹیوں کو تلف کریں تاکہ سفید مکھی کے حملہ کی شدت کو کم کیا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ ابتدا میں سفید مکھی کے حملہ کی نشاندہی کیلئے فصل کا باقاعدہ معائنہ جاری رکھیں اور نقصان کی معاشی حد پر فوری زہر پاشی کریں۔ کپاس کے ایسے پتے جن پر سفید مکھی کا شدید حملہ ہو توڑ کر پانی میں ڈبو دیں۔ کھالوں پر موجود جڑی بوٹیوں کی تلفی کیلئے زہر پاشی کریں تاکہ سفید مکھی وہاں سے کھیتوں میں منتقل نہ ہوسکے۔ انہوں نے بتایا کہ کھالوں کے نزدیک سفید مکھی کا حملہ زیادہ ہوتا ہے اس لئے وہاں زہر پاشی کا عمل وقفہ وقفہ سے جاری رکھیں۔ بالغ اور بچے ہمہ وقت فصل پر موجود ہوں تو ایسی زہر کا انتخاب کریں جو ان دونوں کے خلاف مؤثر ہو۔ ایک ہی زہر کا بار بار سپرے نہ کریں۔ انہوں نے کہا کہ سفید مکھی کے خلاف مؤثر کنٹرول کیلئے صبح یا شام کے وقت قطاروں میں ہالوکون نوزل سے سپرے اور سفید مکھی کے مؤثر تدارک کیلئے زہروں کا انتخاب محکمہ زراعت کے مقامی زرعی ماہرین کے مشورے سے کریں۔

مزید : کامرس


loading...