اورنج لائن ٹرین منصوبہ،چینی کمپنی کیساتھ معاہدہ منسوخ نہیں کیا گیا،ذرائع پنجاب حکومت

  اورنج لائن ٹرین منصوبہ،چینی کمپنی کیساتھ معاہدہ منسوخ نہیں کیا گیا،ذرائع ...

لاہور (خصوصی رپورٹ) پنجاب حکومت کے ذرائع نے وزیر اعلیٰ پنجاب کی طرف سے اورنج لائن ٹرین منصوبے کے انتظام و انصرام کا ٹھیکہ منسوخ کرنے کی سختی سے تردید کی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے چینی کمپنی کیساتھ اس ٹھیکے کی منسوخی کے حوالے سے بعض اخبارات میں شائع ہونے والی خبریں قیاس آرائیوں پر مبنی ہیں۔ وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے پنجاب ماس ٹرانزٹ اتھارٹی کے سربراہ کی حیثیت سے چینی کمپنی کیساتھ معاہدے کے بارے میں کوئی فیصلہ نہیں کیا۔ واضح رہے روزنامہ ”ڈان“ نے اتوار کے روز رپورٹ شائع کی تھی کہ اورنج لائن ٹرین کو چلانے اور اس کے انتظامات کے حوالے سے ٹھیکے میں قواعد و ضوابط کے حوالے سے بے قاعدگیوں کے باعث وزیراعلیٰ پنجاب نے اسے منسوخ کر دیا ہے۔ اورنج لائن ٹرین کے انتظام و انصرام کے حوالے سے ٹھیکہ چینی کمپنی کو دیا گیا جو 10 برس کیلئے ہے۔ اس ٹھیکے کی مالیت 60 ارب روپے ہے۔اخبارنے وزیر اعلی ہاؤس کے ذرائع کے حوالے سے انکشاف کیا  کہ اورنج لائن میٹرو ٹرین کو چلانے اور انتظامات سنبھالنے کے لیے چینی کمپنی کو تفویض کردہ تقریباً 60 ارب روپے کا ٹھیکہ قانونی اور تکنیکی بنیادیوں پر منسوخ کیا گیا۔اس حوالے سے بتایا گیا اتھارٹی کے سابق مینیجنگ ڈائریکٹر سبطین فضل حلیم نے ٹھیکے کے دستاویزات تیار کروائی تھیں اور6 ماہ قبل ہی ان کی مدت پوری ہوئی تھی۔بعدازاں سپریم کورٹ آف پاکستان کی ہدایت پر انہیں مزید توسیع نہیں دی گئی۔ متعلقہ اتھارٹی کے مختلف محکموں اور اداروں نے ٹھیکے کے قانونی اور مالیاتی شعبوں کا جائزہ لیا اور پبلک پروکیورمنٹ ریگولیٹری اتھارٹی نے ٹھیکہ منسوخ کردیا۔

اورنج لائن معاہدہ

مزید : صفحہ اول


loading...