شبقدر ، 16بجلی فیڈرز پر بجلی کی بدترین لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ جاری

شبقدر ، 16بجلی فیڈرز پر بجلی کی بدترین لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ جاری

شبقدر (نمائندہ خصوصی )شبقدر کے16بجلی فیڈرز پر بجلی کی بدترین لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ جاری،عوام نے شدید گرمی اور بجلی کی ظالمانہ لوڈ شیڈنگ پر سخت غم و غصے میں اختجاجی مظاہروں کی دھمکی دیدی،پاکستان تحریک انصاف کی حکومت نے عوام کو مختلف مسائل کی دلدل میں پھنسا کر ان کی زندگیاں اجیرن بنا دیں ایم این اے NA23نے بجلی سمیت تمام مسائل پر آنکھیں بند کر دیں فوری مستعفی ہو جائے اب یہ حیلے بہانے جھوٹے بیانات نہیں چلے گی کہ عوام بجلی بل نہیں دیتے واپڈا اہلکاروں اور مقامی سیاستدانوں کی وجہ سے بجلی کا مسئلہ حل نہیں ہوتا عوام ، سخت گرمی کی لہر اور بجلی لوڈ شیڈنگ نے پہلے سے پریشان حال عوام کی پریشانیوں اور مشکلات میں مذید اضافہ کر دیا پی ٹی آئی حکومت کی غلط فیصلوں ناقص انتظامات کی وجہ سے عوام کے اوسان خطا ہو گئے عوام سخت ذہنی دباﺅ میں ہیں اعلیٰ عدالتیں فوری نوٹس لیں عوامی حلقے تفصیلات کے مطابق پاکستان تحریک انصاف حکومت کے بار بار مہنگائی اور ظالمانہ ٹیکسوں کے اعلانات نے عوام کو سخت پریشانیوں اور مشکلات میں مبتلا کر دیا ہیں پہلے سے پریشان حال عوام پر اب بجلی کی ظالمانہ لوڈشیڈنگ کا سلسلہ جاری ہیں جس کے باعث شبقدر میں 16بجلی فیڈرز پر18گھنٹوں سے زیادہ بجلی لوڈ شیڈنگ جاری ہیں ظالمانہ بجلی لوڈ شیڈنگ کے باعث اکثر مساجد میں پانی ناپید ہو گیا ہے گھریلوں خواتین اور مریضوں کو بھی سخت گرمی میں بجلی لوڈ شیڈنگ نے عذاب میں مبتلا کر دیا ہے جبکہ چھوٹے بچوں کو رات بھر مچھروں کی یلغار کی وجہ سے نیند نہیں آسکتی اور رات بھر ہر گھر سے ان چھوٹے بچوں کی رونے کی آوازیں آرہی ہیں گرمی کی شدت میں اضافے اور ظالمانہ بجلی لوڈ شیڈنگ پر مختلف بجلی فیڈرز جن میں حاجی زئی،پہلوان قلعہ ،مٹہ مغل خیل ،پیر قلعہ،رشکئی،سرو کلی،مچنی ون،مچنی ٹو،حلیم زئی،کتوزئی،گونڈا،کانگڑہ،اوچہ ولہ،شہباز خان کورونہ،خواجہ وس کورونہ،میجر قلعہ،میاں قلعہ،میاں عیسیٰ ،میرزو،کوٹک ،خو بئی بہلول خیل،فاطمہ خیل اور دیگر علاقوں کے عوام کی زندگی ایک عذاب بن گئی اور عوام سخت ذہنی دباﺅ کا شکار ہیں عوامی حلقوں نے ایم این اے 23کی عوامی مسائل پر خاموشی اور بجلی کی ظالمانہ لوڈ شیڈنگ پر سخت غم و غصے کا اظہار کرتے ہوئے فوری طور پر مستعفی ہونے کا مطالبہ کر دیا جبکہ سپریم کور ٹ آف پاکستان اور پشاور ہائی کورٹ سے فوری نوٹس کا مطالبہ کر دیاہیں

مزید : علاقائی


loading...