لاہور،نجی یونیورسٹی کے گارڈ کیخلاف 12سالہ بچے کی ہلاکت کا مقدمہ درج

لاہور،نجی یونیورسٹی کے گارڈ کیخلاف 12سالہ بچے کی ہلاکت کا مقدمہ درج

لاہور (صباح نیوز) انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی یونیورسٹی انتظامیہ کی مبینہ غفلت سے بارہ سالہ بچے کی ہلاکت کا مقدمہ درج کرلیا گیا جبکہ بچے کی یونیورسٹی میں داخل ہونے کی سی سی ٹی وی فوٹیج حاصل کر لی گئی۔تفصیلات کے مطابق پولیس نے واقعہ کا مقدمہ لائف گارڈ نعیم کے خلاف درج کیا ہے،جس میں قتل کی دفعات شامل کی گئیں ہیں۔ایف آئی آف کے متن کے مطابق شیراز گھر سے گیارہ بجے نکلا، اہل خانہ ڈھونڈتے ہوئے یونیورسٹی آف انجینئر نگ یونیورسٹی پہنچے تو سوئمنگ پول کے واش روم میں اسے مردہ حالت میں پایا۔پولیس حکام کا کہنا ہے کہ معاملے کی تحقیقات جاری ہیں جلد قتل کے اصل حقائق منظر عام پر آئیں گے۔دوسری جانب شیراز کے یونیورسٹی کے سوئمنگ پول میں داخل ہونے کی سی سی ٹی وی فوٹیج بھی حاصل کرلی ہے جس میں دیکھا جاسکتا ہے یونیورسٹی ملازم نے انہیں اندر داخل ہونے سے منع تک نہ کیا۔پولیس کے مطابق شیراز اپنے دوست کے ہمراہ گذشتہ دوپہر کو سوئمنگ پول میں نہانے آیا تھا اور نہاتے ہوئے جاں بحق ہوا۔یونیورسٹی انتظامیہ نے رات گئے بچے کی لاش کو رکشے میں رکھ کر اس کے گھر بھجوا دیا تھا۔

مقدمہ درج

مزید : علاقائی


loading...