پشاور، ہسپتالوں میں کورونا مریضوں کیلئے بیڈ اور وینٹی لیٹرز کم پڑ گئے

    پشاور، ہسپتالوں میں کورونا مریضوں کیلئے بیڈ اور وینٹی لیٹرز کم پڑ گئے

  

پشاور (مانیٹرنگ ڈیسک)کورونا کے بڑھتے کیسز کے پیش نظر پشاور کے 2 بڑے تدریسی ہسپتالوں میں کورونا مریضوں کیلئے بیڈ اور وینٹی لیٹرز کم پڑگئے ہیں۔پشاور میں کورونا سے متاثرہ مریضوں کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے اور تعداد ساڑھے 7 ہزار سے تجاوز کرگئی ہے۔ مریضوں کے دباؤ کے باعث حیات آباد میڈیکل کمپلیکس اور خیبر ٹیچنگ ہسپتال میں کورونا سے متاثرہ مریضوں کیلئے بیڈز کم پڑ گئے ہیں جبکہ ہسپتالوں میں متاثرہ مریضوں کے لیے وینٹی لیٹرز کی کمی کا بھی سامنا ہے۔ حیات آباد میڈیکل کمپلیکس میں مختص تمام 25 وینٹی لیٹرز پر کورونا مریض زیرعلاج ہیں جبکہ مریضوں کے لیے مختص 144 بیڈز میں سے صرف 16 خالی رہ گئے ہیں۔اسی طرح خیبر ٹیچنگ ہسپتال میں بھی کورونا مریضوں کے لیے 25 وینٹی لیٹرز میں 3 خالی رہ گئے ہیں جبکہ ہسپتال میں 91 میں سے 84 بیڈز پر کورونا مریض زیرعلاج ہیں۔ان دونوں ہسپتالوں میں اب تک کورونا کے باعث 227 مریض انتقال کرچکے ہیں۔ حیات آباد میڈیکل کمپلیکس کے ڈائریکٹر ڈاکٹر شہزاد اکبر نے بتایا کہ کورونا کے مریضوں کی تعداد میں روز بروز اضافہ ہورہا ہے۔ہسپتال میں بیڈز کا مسئلہ ہے جبکہ آکسیجن کا استعمال بھی بڑھ گیا ہے۔ حکومت کو آگاہ کردیا ہے کہ کورونا مریضوں کو دیگر ہسپتالوں میں منتقل کیا جائے۔دوسری جانب خیبر ٹیچنگ ہسپتال کے ڈائریکٹر ڈاکٹر ظفر آفریدی نے بتایا کہ ہسپتال پر کورونا مریضوں کا بوجھ بڑھ رہا ہے، حکومتی ہدایات کے تحت کورونا مریضوں کے لیے بیڈز کی تعداد میں اضافہ کر رہے ہیں۔

بیڈز کم

مزید :

صفحہ آخر -