کورونا ٹیسٹ کرنیوالے تمام لیبارٹری انتظامیہ 30 جون کو طلب

کورونا ٹیسٹ کرنیوالے تمام لیبارٹری انتظامیہ 30 جون کو طلب

  

پشاور(نیوزرپورٹر)پشاور ہائی کورٹ نے صوبے میں کورونا ٹیسٹ کرنے والے تمام پرائیویٹ ہسپتالوں اور لیبارٹری انتظامیہ کو 30 جون کو طلب کرلیا جسٹس قیص رشید نے ریمارکس دیئے کہ رپورٹس ملی ہیں کہ ہسپتالوں میں وینٹی لیٹر غیر تربیت یافتہ عملہ اپریٹ کررہا ہے وینٹی لیٹر صحیح طور پر اپریٹ نہ ہونے سے مریضوں کو مشکلات کا سامنا ہے کیس کی سماعت جسٹس قیصر رشید اور جسٹس اعجاز انور پر مشتمل دو رکنی بینچ نے کی کیس کی سماعت شروع ہوئی تو ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل سید سکند رضا اور ہیلتھ کئیر کمیشن کے نمائندہ عدالت میں پیش ہوا ہیلتھ کئیر کمیشن کے نمائندے نے عدالت کو بتایا کہ صوبے میں اس وقت 500 وینٹی لیٹر موجود ہے کورونا وائرس کے مریضوں کے لئے 503 بیڈ پرائیویٹ ہسپتالوں میں مختص کئے ہیں جس پر جسٹس قیصر رشید نے کہا کہ کہ رپورٹس ملی ہیں کہ ہسپتالوں میں وینٹی لیٹر غیر تربیت یافتہ عملہ اپریٹ کررہا ہے اینٹی لیٹر صحیح طور پر اپریٹ نہ ہونے سے مریضوں کو مشکلات کا سامنا ہے جسٹس قیصر رشید نے ہیلتھ کئیر کمیشن کے نمائندے سے استفسار کیا کہ کورونا ٹیسٹ کرنے والے پرائیویٹ ادارے عدالت کو بتائیں کتنی فیس لے رہے ہیں؟ عدالت نے کوروناٹیسٹ کرنے والی نجی لیبارٹریوں کی انتظامیہ کو طلب کرلیا اور کہا کہ سرکاری اور پرائیوٹ ادارے جو کورونا ٹیسٹ کرتے ہیں عدالت کو بتائے ایک ٹیسٹ کی کتنی فیس وصول کررہے ہیں عدالت نے کیس کی سماعت 30 جون تک ملتوی کردی

مزید :

پشاورصفحہ آخر -