کورونا وائرس کی وجہ سے لوگ اب دن کا کتنا وقت انٹرنیٹ پر گزار دیتے ہیں؟ حیران کن انکشاف سامنے آگیا

کورونا وائرس کی وجہ سے لوگ اب دن کا کتنا وقت انٹرنیٹ پر گزار دیتے ہیں؟ حیران ...
کورونا وائرس کی وجہ سے لوگ اب دن کا کتنا وقت انٹرنیٹ پر گزار دیتے ہیں؟ حیران کن انکشاف سامنے آگیا

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) کورونا وائرس اور لاک ڈاﺅن کی وجہ سے لوگوں کی عادات میں بہت کچھ تبدیلی آئی ہے، کچھ اچھی اور کچھ بری۔حد سے زیادہ آن لائن وقت گزاری کو ماہرین معیوب قرار دیتے آ رہے تھے لیکن لاک ڈاﺅن کے سبب لوگوں کے آن لائن وقت گزارنے کی شرح میں کئی گنا اضافے کا انکشاف سامنے آ گیا ہے۔ میل آن لائن کے مطابق آف کام نامی ایک فرم نے تحقیقاتی سروے کے نتائج میں بتایا ہے کہ کورنا وائرس اور لاک ڈاﺅن کی وجہ سے بالغ لوگوں کے آن لائن وقت گزارنے میں کی شرح بڑھ کر اوسطاً 4گھنٹے روزانہ تک پہنچ گئی ہے۔

ماہرین کے مطابق لاک ڈاﺅن میں آن لائن ویڈیو کال سروس ’زوم‘ کے صارفین کی تعداد میں بھی کئی گنا اضافہ ہوا ہے۔ جنوری 2020ءمیں برطانیہ میں 6لاکھ 59ہزار لوگ یہ سروس استعمال کر رہے تھے اور اب یہ تعداد بڑھ کر 1کروڑ 30لاکھ تک جا پہنچی ہے۔ آف کام کے شعبہ سٹریٹجی اینڈ ریسرچ کے ڈائریکٹر ژی کونگ تی کا کہنا تھا کہ ”کورونا وائرس اور لاک ڈاﺅن کی وجہ سے ٹیکنالوجی کے حوالے سے لوگوں کی عادات میں جو تبدیلیاں آئی ہیں یہ دیرپا ثابت ہوں گی۔ اب لوگ پہلے کی نسبت روایتی ٹی وی کی بجائے آن لائن زیادہ ویڈیو دیکھنے لگے ہیں۔ اس کے ساتھ آن لائن وقت گزارنے کی شرح میں اضافہ ہوا ہے۔ یہ ایسی عادات ہیں جو کورونا وائرس کی وباءختم ہونے کے بعد بھی طویل وقت تک لوگوں میں باقی رہیں گی۔ “

مزید :

ڈیلی بائیٹس -