ٹانک،انگور اڈہ کسٹم ایجنٹس اور تاجروں کی تالہ بندی 

ٹانک،انگور اڈہ کسٹم ایجنٹس اور تاجروں کی تالہ بندی 

  

 ٹانک(نمائندہ خصوصی)انگور آڈہ کسٹم آفس کو کلیرنس ایجنٹ اور تاجروں نے تالہ لگانے کے بعد 25 تاریخ تک مطالبات تسلیم نہیں ہوئے تو پاک افغان شاہراہ بند کردیا جائے گا،ویباک ان لائن سسٹم ماننے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ ٹریڈ یونین اور کسٹم کلیرنس ایجنٹوں کا ایکا۔تفصیلات کے مطابق جنوبی وزیرستان سب ڈویژن وانا کا سرحدی علاقہ آنگور آڈہ کسٹم ٹرمینل کو گزشتہ دنوں مقامی تاجروں اور کسٹم کلیرنس ایجنٹوں نے تالہ لگا کر ہر قسم امپورٹ اور ایکسپورٹ کاروبار کا سلسلہ بند کردیا تھا، اس سلسلے میں آج وانا بازار میں ٹریڈ یونین کے عہدیداروں اور کسٹم کلیرنس ایجنٹوں کا ایک مشترکہ جرگ منعقد ہوا جسمیں فیصلہ کیا گیا کہ جب تک حکومت ہمارے ساتھ کیئے گئے وعدوں کو عملی جامعہ نہیں پہناتا تب تک ہم ویباک آن لائن سسٹم بائیکاٹ کا سلسلہ جاری رہے گا، جرگے سے  تاجر رہنما ملک سردار علی،  عنایت اللہ اور سیف اللہ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ انگوراڈہ کسٹم ٹرمینل تعمیر کرتے وقت انگوراڈہ کے عوام اور تاجر برادری کے ساتھ کیے گئے وعدے جسمیں  گرداوی سے لیکر انگوراڈہ بارڈر تک سڑک کو کشادہ کرنا اور انگور آڈہ کو بجلی کی فراہمی و انگوراڈہ بازار میں ہنگامی بنیادوں پر قومی بنک کا برانچ بنائے سمیت عوام کیلئے انٹرنیٹ سروس فراہم کرنے کے وعدوں کو تاحال ایفا نہیں کیا جا سکا،مقررین کا کہنا تھا کہ جب تک ہمارے مطالبات تسلیم نہیں کیئے جاتے تب تک کسٹم ٹرمینل احتجاجی طور پر بند رہیگا، ان کا کہنا تھا کہ شرم کی بات ہے کہ کمیونیکیشن سہولیات نہ ہونے کے باعث ہم افغان موبائل کمپنیوں کے سیم استعمال کررہے ہیں،یاد رہے کہ انگوراڈہ کسٹم ٹرمینل بند ہونے کے باعث روزمرہ کی بنیاد پر ملکی معیشت کو کروڑوں روپے کا نقصان پہنچ رہا ہے

مزید :

پشاورصفحہ آخر -