وہ پاکستانی جس نے کراچی میں ایمبولینسز اور سکالر شپس پر 100 ملین ڈالرز خرچ کیے، اب کہاں ہے؟

وہ پاکستانی جس نے کراچی میں ایمبولینسز اور سکالر شپس پر 100 ملین ڈالرز خرچ ...
وہ پاکستانی جس نے کراچی میں ایمبولینسز اور سکالر شپس پر 100 ملین ڈالرز خرچ کیے، اب کہاں ہے؟
سورس: Facebook

  

لندن (مجتبیٰ علی شاہ) انسانی حقوق کے معروف پروفیسرنے ابراج گروپ اور اس کے بانی عارف نقوی پر کتاب لکھ دی۔ کراچی میں پیدا ہونے والے عارف نقوی پر مالیاتی فراڈ کے الزامات ہیں اور وہ اس وقت برطانیہ کی حراست میں ہیں۔ امریکہ چاہتا ہے کہ عارف نقوی کو اس کے حوالے کیا جائے۔

کینگنسٹن یونیورسٹی میں وزیٹنگ پروفیسر کے طور پر کام کرنے والے برائین بریواتی نے " دی لائف اینڈ ڈیتھ آف دی ابراج گروپ، عارف نقوی، اے کی مین آر دی فال گائی" (ابراج گروپ کی زندگی اور موت، عارف نقوی، ایک اہم شخصیت یا ٹوٹے ہوئے شخص ) کے نام سے کتاب لکھی ہے۔

کتاب میں انکشاف کیا گیا ہے کہ ابراج گروپ کی سب سے بڑی سرمایہ کاری کراچی کو بجلی فراہم کرنے والی کمپنی کے الیکٹرک تھی جس میں بڑی چینی سرمایہ کاری حاصل کی گئی۔ کتاب میں کہا گیا ہے کہ عارف نقوی ایک مغرور شخص تھے جو اپنی ہی فرم کو بلڈوز کرنے پر تلے ہوئے تھے۔ انہوں نے کراچی میں ایمبولینس سروس اور سکالر شپس پر 100 ملین ڈالر کی رقم خرچ کی۔

مزید :

برطانیہ -