دنیا میں کچھ ایسے لوگ بھی ہیں جو آپ کو غلطی کرتے دیکھ کر شیطانی انداز میں خوش ہوتے ہیں، ملازمت کے دوران یہ صحیح کام بھی نہیں کر پاتے

دنیا میں کچھ ایسے لوگ بھی ہیں جو آپ کو غلطی کرتے دیکھ کر شیطانی انداز میں خوش ...
 دنیا میں کچھ ایسے لوگ بھی ہیں جو آپ کو غلطی کرتے دیکھ کر شیطانی انداز میں خوش ہوتے ہیں، ملازمت کے دوران یہ صحیح کام بھی نہیں کر پاتے

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

مصنف:ڈاکٹر ڈیوڈ جوزف شیوارڈز
ترجمہ:ریاض محمود انجم
 قسط:129
ان لوگوں کے ساتھ آپ کامیابی سے کیسے نمٹ سکتے ہیں جو سراسر آپ کے زوال اور ناکامی کاباعث بنتے ہیں:
اپنی کامیابی اور ترقی کے لیے دوسروں پر اثر انداز ہونے، انہیں اپنی مدد اور معاونت پر آمادہ اور تیار کرنے کے ضمن میں مثبت طرائق و تراکیب کو زیر بحث لانے کے بعد کوئی بھی شخص مجھ سے یہ کہہ سکتا ہے، ”اگر تمہارے طرائق و تراکیب اس قدر کامیاب اور مؤثر ہیں، تو پھر میرے افسران، یہ طریقے و تراکیب مجھ پر استعمال کیوں نہیں کرتے؟ اپنے کام کے دوران تعریف کی بجائے مجھے زیادہ تر تنقید کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔“
اس سوال کے میرے پاس 2 وجوہات ہیں۔ پہلے تو یہ کہ درحقیت اکثر لوگ غذائی اور مفید انا اور احساس برتری کی طاقت و صلاحیت اور اس کے استعمال کرنے کے طریقے سے ناواقف اور بے خبر ہیں۔ انہیں ابھی تک یہ نہیں معلوم کہ سزا نہیں بلکہ تعریف کے ذریعے شاندار اور عظیم نتائج حاصل ہوتے ہیں انہیں یہ خبر نہیں کہ جب صدر لنکن نے یہ کہا تھا تو ان کی کیا مراد تھی ”ایک گیلن صفرا (Bilc) کی نسبت شہد کے ایک قطرے کے گرد زیادہ مکھیاں جمع ہوں گی“
”پھر یہ سوال کہ دوسرے لوگ میری تعریف و ستائش نہیں کرتے تو پھر میں ان کی کیوں تعریف کروں“ تو اس کا جواب نہایت عملی ہے ”میرے خیال کے مطابق تمہاری کامیابی کا انحصار تمہاری اس صلاحیت پر ہے کہ تم ان لوگوں کو یاپنی مدد اور معاونت پر کیسے آمادہ کرتے ہو، یعنی تمہاری کامیابی کا انحصار تمہاری اس صلاحیت پر ہے کہ جس کے ذریعے تم لوگوں کو اپنی اشیاء زیادہ سے زیادہ خریدنے پر آمادہ کرتے ہو، انہیں اپنے سخت محنت کرنے پر آمادہ کرتے ہو، اپنے سے محبت کرنے پر آمادہ و تیار کرتے ہو، اور اپنی حمایت و معاونت پر آمادہ اور تیار کرتے ہو۔ اگر دوسرے لوگ تمہیں نیچا دکھانے کی کوشش کرتے ہیں تو یہ ان کا اپنا طرز عمل اور فعل ہے، وہ غلطی پر ہیں، لیکن ان کی اپنی پسند و ناپسند ہے۔ تم وہ کام کرو جو صحیح اور مفید ہو، تم لوگوں کو غذائی اور مفید انا اور احساس برتری میں فراہم کرتے رہو ان کے شاندار نتائج سے لطف اندوز ہو۔“
یہ ایک نہایت افسوسناک حقیقت ہے کہ اس دنیا میں کچھ ایسے لوگ بھی موجود ہیں جو آپ کو غلطی کرتے دیکھ کر شیطانی انداز میں خوش ہوتے ہیں، اپنی ملازمت کے دوران یہ لوگ صحیح کام نہیں کر پاتے، ان کو ڈانٹ بھی پڑتی ہے اور ان کی سرزنش بھی کی جاتی ہے، وہ کسی بھی قسم کی فحش غلطیاں بھی کرتے ہیں۔ امکانات یہ ہیں کہ ہر وقت اس قسم کے لوگوں میں گھرے رہتے ہیں جو آپ کو نیچا دکھانے کی فکر میں غلطاں رہتے ہیں۔ اور پھر اس جدید دور میں بھی کچھ بچے ایسے بھی ہوتے ہیں جو اپنے والدین کے نقش قدم پر چلتے ہوئے دوسرے بچوں کا مذاق اڑا کر خوشی و لطف محسوس کرتے ہیں۔
اب مسئلہ یہ ہے کہ آپ جو کچھ بھی کرتے ہیں، جو کچھ بھی خدمات بجالاتے ہیں یا جو کچھ بھی کامیابیاں حاصل کرتے ہیں، اکثر لوگ آپ کی تعریف و ستائش کرنے کی بجائے آپ کو اپنی تنقید کا نشانہ بناتے ہیں ”میں نہیں کر سکتا“ میرے ذخیرہ الفاظ کے مطابق عام لفظ نہیں ہے لیکن یہاں اس کا استعمال لازمی ہے۔ آپ ان نیچا دکھانے والے افراد سے نجات نہیں حاصل کر سکتے لیکن آپ یہ معلوم کرکے لطف محسوس کر سکتے ہیں کہ کس شخص پر ہونے والے تنقید کی شدت کی نوعیت اور اس کی کامیابی کے درمیان گہرا تعلق موجود ہے۔ عام طور پر صدر،قوم کا وہ ایک فرد ہوتا ہے جس پر سب سے زیادہ تنقید کی جاتی ہے، آپ کے ادارے میں سربراہ اعلیٰ سب سے زیادہ تنقید کا نشانہ بنتا ہے، سکول میں ہیڈ ماسٹر سب سے زیادہ تنقید کا شکار ہوتا ہے اور پھر کھیلوں میں، کوچ، تنقید کے کوڑے اور تازیانے سہتا ہے۔(جاری ہے)
نوٹ: یہ کتاب ”بُک ہوم“ نے شائع کی ہے (جملہ حقوق محفوط ہیں)ادارے کا مصنف کی آراء سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

مزید :

ادب وثقافت -