انتخابی بائیکاٹ مہم ناکام بنانے کے لیے حریت پسندوں کے خلاف کریک ڈاون

انتخابی بائیکاٹ مہم ناکام بنانے کے لیے حریت پسندوں کے خلاف کریک ڈاون

سری نگر(کے پی آئی) مقبوضہ کشمیر کی آزادی پسند قیادت کی طرف سے انتخابی بائیکاٹ مہم ناکام بنانے کے لیے حریت پسندوں کے خلاف کریک ڈاون شروع ہے اس دورا ن دختران ملت کی سربراہ آسیہ اندرابی اور تحریک حریت کے دفتر پر چھاپے مارے گئے۔ سرینگر کے پائین شہر نواکدل میں سنگباری شروع ہوئی جس کے دوران کچھ وقفہ کیلئے افراتفری کا ماحول پیدا ہوا۔ نوا کدل علاقے میں دن بھر تعینات فورسز نے جب شام کو اپنے کیمپوں کی طرف رخ کیا تو نوجوانوں نے ان پر سنگبازی کی جبکہ فورسز نے بھی جوابی سنگبازی کی۔اس موقعہ پر فورسز نے سنگبازی کرنے والے نوجوانوں کو منتشر کرنے کیلئے اکا دکا ٹیر گیس کے گولے بھی داغے۔

ادھر کولگام میں پی ڈی پی کنونشن میں اس وقت افرا تفری مچ گئی اور 3 کارکنان زخمی ہوئے جب سنگبازوں کے ایک گروہ نے پتھراؤ کیا ۔نامہ نگار خالد جاوید کے مطابق پی ڈی پی کا یہ انتخابی کنونشن ڈاک بنگلہ چولگام میں منعقد ہورہا تھا ۔ کنونشن کی حفاظت پر مامور سیکورٹی اہلکاروں پر پتھراؤ کیا گیا جس کے باعث 3 افراد زخمی ہوئے جنہیں فوری طور پر علاج و معالجہ کی غرض سے صدر اسپتال کولگام میں داخل کیا گیا ۔ پولیس نے کولگام کے چولگام علاقے میں کسی بھی طرح کی سنگبازی کے واقعہ کو مسترد کیا۔اس دوران سرینگر اور اننت ناگ پارلیمانی حلقوں کیلئے ضمنی انتخابات کی مہم سازی شروع ہونے کے ساتھ ہی مزاحمتی جماعتوں اور لیڈروں کے خلاف کریک ڈاون میں تیزی لائی جارہی ہیں۔ دختران سربراہ آسیہ اندرابی کے گھر پر شبانہ چھاپے مارے گئے تاہم بتایا جاتا ہے کہ آسیہ اندرابی گھر میں موجود نہیں تھی۔تحریک حریت نے کہا ہے کہ پولیس نے اتوار کو دفتر کو سیل کیا اور وہاں پر مجوزہ میٹنگ کو بھی ناکام بنادیا گیا۔حریت کانفرنس کے دونوں سربرہاں سید علی گیلانی اور میرواعظ عمر فاروق سمیت شبیر احمد شاہ اور محمد اشرف صحرائی کے علاوہ درجنوں لیڈروں کو خانہ نظر بند رکھا گیا ہے جبکہ محمد یاسین ملک کو گرفتار کرکے سینٹرل جیل منتقل کیا گیا ہے۔

مزید : عالمی منظر