لکسمبرگ نے ایرانی اثاثوں کی بحالی کی درخواست مسترد کر دی

لکسمبرگ نے ایرانی اثاثوں کی بحالی کی درخواست مسترد کر دی

لکسمبرگ(آن لائن)مغربی یورپی ملک لکسمبرگ نے ایران کے مرکزی بنک کی طرف سے ایک ارب 60 کروڑ ڈالر کے منجمد اثاثوں پر عائد پابندیاں ختم کرنے اور منجمد اثاثے بحال کرنے کی درخواست مسترد کردی ۔العربیہ چینل کی رپورٹ کے مطابق لکسمبرگ کی ایک عدالت نے گذشتہ روز سنائے گئے فیصلے میں ایرانی مرکزی بنک کا ایک ارب ساٹھ کروڑ ڈالر کے اثاثے بحال کرنے کا مطالبہ مسترد کردیا۔لکسمبرگ کی مرکزی عدالت کے چیف جسٹس نے ایرانی اثاثوں کی بحالی کی درخواست پر فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ جن شرائط کے تحت ایران کے منجمد اثاثوں کو بحال کیا جانا وہ پوری نہیں ہوئی ہیں۔ اس رقم پر پابندی گذشتہ برس اس وقت لگائی گئی تھی جب گیارہ ستمبر 2001ء میں امریکا میں ہونے والی دہشت گردی کے متاثرین نے ایران پر ہرجانے کا دعویٰ دائر کیا تھا۔ اس دعوے کے بعد ایران کی ڈیڑھ ارب ڈالر سے زاید کی رقم منجمد کردی گئی تھی۔نائن الیون دہشت گردی کے متاثرین کے وکلاء نے سنہ 2011ء4 میں نیویارک کی ایک وفاقی عدالت کے جج کو قائل کرلیا تھا کہ گیارہ ستمبر دوہزار ایک کو امریکا میں ورلڈ ٹریڈ سینٹر اور پینٹاگون میں ہونے والے حملوں میں ایران کا بھی ہاتھ تھا کیونکہ ان حملوں میں ایران القاعدہ کو مدد فراہم کی تھی۔ سنہ 2012ء و امریکی عدالت نے ایران کے پانچ ارب ڈالر کے منجمد اثاثے نائن الیون کے متاثرین میں تقسیم کرنے کا فیصلہ دیا تھا۔

مزید : عالمی منظر