تبدیلی عسکری قوت سے نہیں عوام کی طاقت سے لائی جا سکتی ہے :مولانا فضل الرحمٰن

تبدیلی عسکری قوت سے نہیں عوام کی طاقت سے لائی جا سکتی ہے :مولانا فضل الرحمٰن

کراچی(آن لائن)جمعیت علماء اسلام کے سربراہ قومی اسمبلی میں کشمیر کمیٹی کے چیئرمین مولانا فضل الرحمن نے کہا ہے تبدیلی عسکری قوت سے نہیں بلکہ عوام کی طاقت سے لائی جاسکتی ہے ،اسیلئے ہم پارلیمانی نظام کیساتھ جدوجہد کررہے ہیں،وہ جمعرات کو قصر ناز کراچی میں بشپ نذیر عالم کی سینکڑوں ساتھیوں سمیت جمعیت علماء اسلام میں شمولیت کے موقع پر خطاب کررہے تھے ،اس موقع پرڈپٹی چیئرمین سینٹ مولانا عبدالغفور حیدری،جے یو آئی سندھ کے جنرل سیکریٹری راشد محمود شومرو ،بشپ نذیر عالم ،قاری محمد عثمان ،عبدالقیوم ہالیجوی ودیگر نے بھی خطا ب کیا، فضل الرحمن کا مزید کہنا تھا 23 مارچ کے موقع پر بشپ نذیر عالم کی جے یو آئی میں شمولیت باہمی وحدت،ملک و انسانیت کیلئے نیک فا ل ہے ،حضورؐ کی تعلیمات کو کسی ایک مذہب یا فرقہ تک محدود نہیں کیا جاسکتا،ہم نے اپنی مذہبی شناخت کو تحلیل نہیں کیا،ہمیں دنیا کو اسلام کے مطابق لے کر چلنا ہے ، سیکولر اسلام پر تنقید کرتے ہیں،تاہم اقلیت اسلام کے متعلق جو پیغام دنیا کو دیگی وہ موثر ہوگا،ہمیں خواتین کے حقوق دینے پر کوئی اعتراض نہیں،نظریات سے اختلاف ہوسکتا ہے مگر حقوق کے بارے میں نہیں،ہمارے پلیٹ فارم پر تمام مکاتب فکر کے لوگ آسکتے ہیں،ہمیں ترقی کی راہ میں رکاوٹ کہا جاتا ہے ، بتایا جائے 70 سال میں ہم کتنا عرصہ اقتدار میں رہے ،کیا رکاوٹ کھڑی کی ، آ ز ا د ی انسان کا بنیاری حق ہے اور اس سے یہ حق کوئی نہیں چھین سکتا ۔ ہم پارلیمانی و جمہوری نظام کے حامی ہیں اور سمجھتے ہیں ملک کو زندہ رکھنے کیلئے جمہوری و پارلیمانی نظام لازم اور ملزوم ہیں ، تبدیلی کا سرچشمہ عوام ہیں ،خون بہائے بغیر مستقبل کی جدوجہد کا تعین کرنا ہوگا ، جب میرے والد وزیراعلیٰ تھے تو اسوقت تعلیمی اداروں کو قومی تحویل میں لیا گیا تو انہوں نے مشنری سکولوں کو سرکاری تحویل میں لینے کی مخالفت کی۔ پگڑی اور داڑھی کے بارے میں منفی تاثرپھیلایا جاتا ہے ،لیکن جب کوئی ہماری صف میں شامل ہوتا ہے تو اسے حقائق کا اندازہ ہوتا ہے ۔اس موقع پر عبدالغفور حیدری کا کہنا تھا جے یو آئی وہ مذہبی جمہوری جماعت ہے جس کے دروازے ہمیشہ اقلیتوں کیلئے کھلے رہتے ہیں،جبکہ بشپ نذیر عالم نے کہا جے یو آئی کا قلیتوں سے اچھا سلوک دیکھ کر حصہ بنے ہیں ، ہندو اور سکھ بھی آج جے یو آئی میں شامل ہورہے ہیں، مولانا فضل الرحمن اور انکی ٹیم کیساتھ مل کرملک کو ترقی کی جانب لے کر جائیں گے۔

فضل الرحمن

مزید : علاقائی