معروف فیشن ڈیزائنر ماریہ بی کے شوہر نے کرونا وائرس میں مبتلا ملازم کے ساتھ ایسا کام کردیا کہ ہزاروں لوگوں کی زندگیوں کو خطر ے میں ڈال دیا

معروف فیشن ڈیزائنر ماریہ بی کے شوہر نے کرونا وائرس میں مبتلا ملازم کے ساتھ ...
معروف فیشن ڈیزائنر ماریہ بی کے شوہر نے کرونا وائرس میں مبتلا ملازم کے ساتھ ایسا کام کردیا کہ ہزاروں لوگوں کی زندگیوں کو خطر ے میں ڈال دیا

  



لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن )معروف فیشن ڈیزائنر ماریہ بی کے شوہر نے کرونا وائرس کا ٹیسٹ مثبت آنے پر ملازم کو رپورٹ کیے بغیر بس میں بٹھا کر گاوں بھیج دیا جس کے باعث ممکنہ طور پر ہزاروں لوگوں کرونا وائرس ہونے کا خدشہ پیدا ہو گیا ۔

تفصیل کے مطابق سوشل میڈ یاپر ماریہ بی کی ایک ویڈیو سامنے آئی جس میں انہوں نے وزیراعظم سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے گھر پر پولیس نے ایسے ریڈ کیا جیسے ہم پورے لاہور کے سب سے بڑے ڈرگ لارڈ ہوں۔روتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ پولیس والوں نے بتایا کہ میرے خاوند پر ایف آئی درج ہے اور وہ اسے گرفتار کر کے اپنے ساتھ لے گئے ہیں ، پولیس والوں نے اسے گرفتار بھی وکیل کی غیر موجودگی میں کیا۔ماریا بی کا کہنا تھا کہ یہ واقعہ رات ساڑھے بارہ بجے پیش آیا، اس وقت ہم نے بہت سے لوگوں سے رابطہ کرنے کے لئے کوشش کی لیکن آدھی رات کا وقت تھا اس لئے کوئی بھی جاگ نہیں رہا تھا۔ماریا بی نے الزام لگایا کہ پولیس والے ان سے بہت زیادہ بدتمیزی کر رہے تھے اور انہیں کہہ رہے تھے کہ آپ لوگ مجرم ہیں۔ ماریا بی نے سوال کیا ہم لوگ مجرم کیسے ہو گئے ہم لوگ تو suffer کر رہے ہیں کیوں کہ کسی بھی وقت ہمارے سارے خاندان کے ٹیسٹ پازیٹو ا سکتے ہیں۔ماریا بی کا روتے ہوئے سوال تھا کہ یہ کس قسم کا سسٹم پنجاب میں رائج؟

اس پر پولیس کا موقف یہ ہے کہ ماریہ بی کے ایک ملازم میں کرونا وائرس کی تشخیص ہوئی لیکن ماریہ کے خاوند نے بجائے اسے رپورٹ کرنے کے ملازم کو ایک بس میں بٹھا کر اسے اس کے گائوں بھجوادیا جس کی وجہ سے بہت سے دیگر لوگوں کو کرونا وائرس لگنے کا خدشہ ہوگیا ہے۔

مزید : قومی /کورونا وائرس