چھٹیوں پر جرمنی گیا بادشاہ اور پیچھے سے کورونا وائرس کی ستائی عوام نے آن لائن بغاوت کا آغاز کردیا

چھٹیوں پر جرمنی گیا بادشاہ اور پیچھے سے کورونا وائرس کی ستائی عوام نے آن لائن ...
چھٹیوں پر جرمنی گیا بادشاہ اور پیچھے سے کورونا وائرس کی ستائی عوام نے آن لائن بغاوت کا آغاز کردیا

  



بنکاک(مانیٹرنگ ڈیسک) تھائی لینڈ کو ایک طرف کورونا وائرس نے اپنی لپیٹ پر لے رکھا ہے، اس پر ملک کا بادشاہ چھٹیوں پر جرمنی گیا ہوا ہے۔ اس پر تھائی عوام اس قدر برانگیختہ ہو چکے ہیں کہ انہوں نے آن لائن بغاوت کر دی ہے۔ میل آن لائن کے مطابق تھائی لینڈ کے بادشاہ کا جرمنی میں بھی ذاتی گھر ہے اور وہ جرمنی کو اپنا دوسرا گھر کہتا ہے۔ کورونا وائرس کی وباءکے دوران بادشاہ جا کر اپنے دوسرے گھر یعنی جرمنی بیٹھ گیا ہے اور شہریوں کو لاوارث چھوڑ دیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق چین میں اگرچہ بادشاہ کی ہتک کرنا اور بغاوت کرنا سخت جرم ہے اور اس پر 15سال تک قید کی سزا ہو سکتی ہے لیکن عوام کو بادشاہ کا وباءکے دنوں میں شہریوں کو اکیلا چھوڑ کر چھٹیوں پر جانا اس قدر ناپسند آیا ہے کہ انہوں نے ملک میں بادشاہت کے خلاف ہی آن لائن مہم چلا دی ہے۔ تھائی لینڈ میں سوشل میڈیا پر ’ہمیں بادشاہ کی ضرورت ہی کیا ہے‘ (Why do we need a king)کا ہیش ٹیگ ٹرینڈ کر رہا ہے اور گزشتہ 24گھنٹوں میں اس ٹرینڈ میں 12لاکھ سے زائد پوسٹس کی جا چکی ہیں۔ ایک تھائی وزیر نے اس مہم میں حصہ لینے والوں کے لیے وارننگ جاری کی ہے اور اپنی ایک پوسٹ میں لکھا ہے کہ ان لوگوں کو قانونی کارروائی کا سامنا کرنا پڑے گا۔واضح رہے کہ تھائی لینڈ میں کورونا وائرس کے اب تک 721کیس سامنے آ چکے ہیں اور ایک شخص کی موت واقع ہو چکی ہے۔

مزید : بین الاقوامی /کورونا وائرس