امریکی امداد کی کٹوتی،افغان صدر اشرف غنی بھی میدان میں آگئے ،ایسا اعلان کرد یا کہ دنیا حیران رہ جائے گی

امریکی امداد کی کٹوتی،افغان صدر اشرف غنی بھی میدان میں آگئے ،ایسا اعلان کرد ...
امریکی امداد کی کٹوتی،افغان صدر اشرف غنی بھی میدان میں آگئے ،ایسا اعلان کرد یا کہ دنیا حیران رہ جائے گی

  



کابل (ڈیلی پاکستان آن لائن)افغان صدر محمد اشرف غنی نے کہا ہے کہ افغانستان کیلئے اقتصادی امداد میں 1 ارب امریکی ڈالر کٹوتی کا ملک کے کلیدی شعبہ جات اور محکموں پر اثر نہیں پڑے گا۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق افغان ٹیلی ویژن پر خطاب کرتے ہوئے صدر اشرف  غنی نے کہا کہ افغانستان کیلئے اقتصادی امداد میں 1 ارب امریکی ڈالر کٹوتی کا ملک کے کلیدی شعبہ جات اور محکموں پر اثر نہیں پڑے گا،حکومتوں کے پاس ہمیشہ تدبر کے حالات کیلئے منصوبے ہوتے ہیں،غیر متوقع حالات کے لئے ہمارے پاس بھی کچھ بنیادی منصوبے ہیں۔انہوں نے کہا کہ  میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ امریکی امداد میں کمی کا براہ راست اثر ہمارے محکموں اور شعبوں پر نہیں پڑے گا،ہم متبادل وسائل کی مدد سے اس خلا کو پر کرنے کی کوشش کریں گے۔

یاد رہے کہ اس سے قبل امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے کہا ہے کہ امریکہ افغانستان کیلئے امریکی امداد میں اس سال 1ارب امریکی ڈالر کی کمی کررہا ہے کیونکہ افغان قیادت اتحادی حکومت قائم کرنے میں ناکام ہوئی ہے۔امریکی محکمہ خارجہ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ امریکہ کو اس بات کا افسوس ہے کہ افغان صدر اشرف غنی اور سابق چیف ایگزیکٹو عبداللہ عبداللہ نے پومپیو کو مطلع کیا ہے کہ وہ مشترکہ حکومت پر رضا مند نہیں ہیں۔ بیان میں کہا گیا ہے آج ہم افغانستان میں اپنے اخراجا ت میں مناسب ردوبدل کا اعلان کرتے ہیں اور رواں سال امداد میں ایک ارب ڈالر کی کمی کی جائے گی۔ ہم 2021 میں مزید 1 ارب ڈالر کم کرنے کو تیار ہیں جبکہ بیان میں اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ افغان قیادت کی ناکامی امریکی قومی مفاد کیلئے براہ راست خطرہ ہے۔افغان رہنماؤ ں کو ایک مستحکم حکو مت قائم کر نی چا ہئے جو سکیورٹی فرا ہم کر سکے اور امن عمل کا حصہ بن سکے، امر یکہ ایسی کا وشوں کی حما یت کیلئے تیار ہے اور آ ج اٹھا ئے جا نے والے اقدا مات پر نظر ثا نی کر سکتا ہے۔

مزید : بین الاقوامی