آمد رمضان اور مہنگائی!

آمد رمضان اور مہنگائی!

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

بازار میں چینی کے نرخ بڑھتے بڑھتے 66روپے فی کلو تک پہنچ گئے، جبکہ چینی اور بیسن کی ذخیرہ اندوزی بھی شروع ہو گئی ہے۔ یہ سب رمضان المبارک کا ’’استقبال‘‘ اور اس کی ’’تیاریاں‘‘ ہیں، صرف یہی نہیں، سبزی اور فروٹ بھی ابھی سے مہنگے ہونا شروع ہو گئے، حتیٰ کہ بازار اور علامہ اقبال ٹاؤن کی منڈیوں میں بھی نرخ بڑھ گئے ہیں۔ اب اطلاع یہ ہے کہ ایل پی جی کے نرخوں میں بھی پانچ روپے فی کلو اضافہ ہو گیا ہے۔ بات یہاں تک نہیں رہے گی۔ مزید آگے بڑھے گی منافع خور اور ذخیرہ اندوز ابھی سے میدان میں ہیں، تو رمضان المبارک میں کیا کریں گے۔ہم کیسے مسلمان ہیں کہ جب بھی کوئی اسلامی تہوار آتا ہے ، ہم منافع خوری کا عمل شروع کر دیتے ہیں۔ اب رمضان المبارک کی آمد آمد ہے تو پہلے مشروبات اور بیسن سمیت دوسری استعمال ہونے والی اشیاء کی قیمتیں بڑھائی جاتی ہیں اور اس کے بعد ہر شے کے نرخ بڑھ جاتے اور صارفین مجبور ہو جاتے ہیں کہ کمائی کے لئے ان حضرات کے پیٹ بھرتے رہیں۔حکومت نے تو ہر شے کے کرائے سمیت نرخ مقرر کئے، لیکن اس سے عوام کو کوئی فائدہ نہیں پہنچا کہ جو مہم شروع کی گئی اس کے مطابق نتائج برآمد نہیں ہوئے، کیونکہ ضلعی انتظامیہ نے جن اشیاء کے نرخوں میں کمی کے امکان کا ذکر کیا وہ درست ثابت نہیں ہوا، ضلعی انتظامیہ کو اعلان سے قبل سوچ لینا چاہئے اور مقررہ مدت میں عمل درآمد بھی یقینی بنانا چاہئے۔

مزید :

اداریہ -