بیورجز انڈسٹری پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی میں3.5فیصد تک اضافے کی تجویز

بیورجز انڈسٹری پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی میں3.5فیصد تک اضافے کی تجویز

  

اسلام آباد(آن لائن)وفاقی حکومت نے آئندہ مالی سال-17 2016 کے بجٹ میں مشروبات مہنگی کرنے کی تیاری مکمل کرلی ،بیورجز انڈسٹری پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی میں ساڑھے تین فیصد تک اضافے کی تجویز ہے۔ایف بی آر ذرائع کے مطابق آئندہ مالی سال کے بجٹ میں بیورجز انڈسٹری پر فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی کی شرح ساڑھے دس فیصد سے بڑھا کر چودہ فیصد کرنے کی تجویز ہے جس سے بارہ ارب روپے کا اضافی ٹیکس حاصل کرنے کا تخمینہ لگایا گیا ہے۔بیورجز انڈسٹری پر ڈیوٹیز میں اضافے سے ملٹی نیشنل مشروبات مہنگی ہوجائیں گی۔پاکستان میں اس وقت 300سے زائد فوڈ اور مشروب ساز کمپنیاں کام کر رہی ہیں حکومت نے رواں مالی سال کی پہلی سہ ماہی میں ٹیکس ٹارگٹ پورا نہ ہونے پر آئی ایم ایف کے حکم پر 350اشیاء پر 40ارب روپے کے ٹیکس لگائے تھے تاکہ رواں مالی سال کے3104ارب روپے کے ٹیکس ہدف کو حاصل کیا جا سکے بیشتر اشیاء پر لگنے والے فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی اور فوڈ اور مشروب سے متعلقہ تھی ذرائع نے بتایا کہ40ارب روپے کے ٹیکس لگانے کے باوجود یف بی آر نے 2528ارب روپے کا ٹیکس اکٹھا کیا ہے اور ایف بی آر کو 40دنوں میں ٹیکس ٹارگٹ کو حاصل کرنے کے لیے 576ارب روپے درکار ہوں گے اور ایف بی آر کو ایک دن میں14.4ارب روپے جمع کرنا ہوں گے واضح رہے کہ ایف بی آر گذشتہ مالی سال 2014-15کے دوران بھی تین مرتبہ نظرثانی شدہ کے باوجود مطلوبہ ہدف حاصل نہیں کر سکا تھا ایف بی آر نے بجٹ میں اعلان کردہ2810ارب روپے کے ٹیکس ٹارگٹ کو کم کر کے 2605ارب روپے کیا تھا لیکن اس کے باوجود سال کے ختم ہونے تک 2590ارب روپے اکٹھے ہو سکے تھے ذرائع کے مطابق آئندہ مالی سال2016-17 کے بجٹ میں ٹیکس وصولیوں کا ہدف 3601ارب روپے کے لگ بھگ مقرر کرنے کی تجویز ہے جبکہ آئی ایم ایف نے آیندہ مالی سال کا بجٹ3770ارب روپے رکھنے کی تجویز دی تھی مگر چیرمین ایف بی آر نے زمینی حقائق کو مدنظر رکھتے ہوئے 3601ارب روپے کا ٹیکس ٹارگٹ تجویز کیا ہے

جبکہ نئے بجٹ کے مجوزہ ٹیکس ہدف کے حصول کیلئے مختلف ٹیکس تجاویز کا جائزہ لیا جارہا ہے جس میں نئے ٹیکس لگانا ،مراعات یافتہ طبتہ کے لیے جاری کردہ ایس آر اوز کو ختم کرنا،موجودہ ٹیکسوں میں ردو بدل،انتظامی اقدامات کو بہتر اور نئے ٹیکس دہندگان کو ٹیکس نیٹ میں شامل کرنے سمیت دیگر اقدامات شامل ہیں مزید براں ایف بی آر نے قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی تجارت کی جانب سے سفارش کے بعد پاوڈر اور پیک دودھ کی قمیتوں میں اضافہ کرنے پر بھی غور خوص کرنا شروع کر دیا ہے اس اقدام سے ملکی کسانوں کو فائدہ ہو گا واضح رہے کہ حکومت نے آئندہ مالی سال کے بجٹ کی تیاریاں مکمل کر لی ہیں اور4.4ٹریلین روپے کاآئندہ مالی سال 2016-17کابجٹ3جون کو پیش کیا جائے گا ۔#/s#

مزید :

کامرس -