ناظم اسلامی جمعیت طلبہ کا اساتذہ تنظیموں کے 3جون کے دھرنے میں شرکت کا اعلان

ناظم اسلامی جمعیت طلبہ کا اساتذہ تنظیموں کے 3جون کے دھرنے میں شرکت کا اعلان

  

  لاہور( نامہ نگار) ناظم اسلامی جمعیت طلبہ صوبہ پنجاب محمد نثار احمد نے اساتذہ تنظیموں کی جانب سے 3جون کو مجوزہ دھرنے میں شرکت کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ جمعیت سرکاری تعلیمی اداروں کی نجکاری کے پلان کو مسترد کرتی ہے۔ تعلیم کی نجکاری قوم کے مستقبل کے ساتھ کھلواڑہے ۔ حکومت اپنے کندھوں سے تعلیم کا بوجھ اتار کر نجی اداروں کے حوالے کرنا چاہتی ہے، یہ حکومت کا غیرذمہ دارانہ رویہ ہے ۔ نجکاری کی اس پالیسی سے نہ صرف اساتذہ اور ان کے خاندان معاشی زبوں حالی کا شکار ہوں گے بلکہ طلبہ کی کثیر تعداد بھی مفت تعلیم کی سہولت سے محروم ہو سکتی ہے۔ انہوں نے مزیدکہا کہ اسلامی جمعیت طلبہ نے ماضی میں بھی ہمیشہ حکومت کی نجکاری پالیسیوں کی مخالفت کی ہے اور آج بھی اپنے اس اصولی موقف پر قائم ہے کہ تعلیم کی فراہمی حکومت کے بنیادی فرائض میں شامل ہے۔ انہوں نے حکومت کی تعلیم دشمن پالیسیوں کی بھرپورمذمت کرتے ہوئے کہا کہ تعلیم کے ساتھ ہمارے حکمرانوں کا رویہ سوتیلی ماں جیسا ہے ۔پہلے ہی تعلیم کے میدان میں توجہ نہ دینے کے سبب ملک تنزلی کا شکار ہے ،اوپر سے نجکاری پالیسی کا اجرا ء حکومت کی غیرسنجیدگی ظاہرکرتاہے ۔تعلیمی اداروں کی پرایؤٹائزیشن دراصل سرمایہ داروں کے مفاد کے پیشِ نظر کی جا رہی ہے، حکومت کو کم از کم تعلیم کو کاروبار بنانے کی پالیسی اختیار کرنے سے باز رہنا چاہیے۔ محمد نثاراحمد نے مزید کہا کہ پنجاب بھرکی اساتذہ تنظیموں کی جانب سے مشترکہ لائحہ عمل خوش آئند ہے ، ہم اساتذہ کہ اس فیصلہ کوخوش آمدید کہتے ہیں اور ان کے ساتھ اس تحریک میں شانہ بشانہ چلنے کے لیے تیار ہیں۔ سرکاری تعلیمی اداروں کی نجکاری ، قوم کے مستقبل کے ساتھ مذاق ہے۔ ہم اس نازک مرحلے میں اساتذہ کے ساتھ کھڑے ہیں، اسلامی جمعیت طلبہ کا ایک وفد تین جون کو پنجاب اسمبلی کے سامنے ہونے والے دھرنا میں شریک ہو گا۔ یاد رہے کہ اس دھرنا میں سینیئرسٹاف ایسوسی ایشن، ایس ای ایس ٹیچرز ایسوسی ایشن، ایجوکیٹر ایسوسی ایشن، ایلیمنٹری ٹیچرز ایسو سی ایشن، انگلش ٹیچرز ایسوسی ایشن، ہیڈ ماسٹر ایسوسی ایش، میونسپل ٹیچرز ایسوسی ایشن، تنظیم اساتذہ، انجمن اساتذہ، اور پنجاب ٹیچرز یونین نے بھرپور شرکت کا اعلان کیا ہے۔ ناظم اسلامی جمعیت طلبہ نے دیگر سول سوسائٹی کی تنظیموں سے بھی گذارش کی کہ وہ اساتذہ کی اس تحریک کا ساتھ دیں تاکہ حکومت کی نجکاری کی پالیسی کو ناکام بنایا جا سکے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 4 -