ایک ہدتہ میں نہر میں نہاتے ہوئے مرنے والوں کی تعداد تین ہو گئی

ایک ہدتہ میں نہر میں نہاتے ہوئے مرنے والوں کی تعداد تین ہو گئی

  

 لا ہور (اپنے کرا ئم ر پو رٹر سے ) شد ید گرمی سے ستائے شہریوں کو نگلنے والی لاہور کی خونی نہر میں شہر یو ں کے نہانے کا سلسلہ جا ر ی ہے ، دو روز قبل مسلم ٹاؤن نہر میں نہا تے ہو ئے سر میں چو ٹ لگنے سے جا ں بحق ہو نے والے 25سا لہ نوجوان کی نعش پو لیس نے ضروری کا رروا ئی کے بعد ور ثا کے حوالے کردی ، نعش گھر پہنچنے پر کہرا م بر پا ہو گیا ، بعدازا ں متوفی کو آبا ئی گا ؤ ں میں سپرد خا ک کردیا گیا ۔ تفصیلا ت کے مطا بق لاہور ، مسلم ٹاؤن ، پر بنس پو ر ہ ، کینا ل روڈ پر گر می کے ستا ئے شہریو ں نے چھٹی کے روز شہر میں نہانے کیلئے نہروں کا ر خ کر لیا ہے ۔ جس کی وجہ سے پچھلے سالوں کی طرح اس سال بھی نہر میں لوگوں کے ڈوب کر جاں بحق ہونے کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے ۔بتا یا گیا ہے کہ پاک پتن کا رہائشی عدنان جو دوروز قبل اپنے دوستوں کے ہمراہ لاہور سیر کے لئے آیا ہوا تھا۔ جو مینار پاکستان اور بادشاہی مسجد کی سیر کے بعد دوستوں کے ہمراہ نہر میں نہانے کے لئے مسلم ٹاؤن چلا گیا۔ عدنان نہر میں نہاتے ہوئے سر میں چوٹ لگنے کے باعث ڈوب کر جاں بحق ہو گیاتھا۔ریسکیو ٹیموں نے عدنان کی لاش نہر سے نکال کرمردہ خا نہ میں منتقل کر دی جسے بعد ازاں پولیس نے ضروری کا رروا ئی کے بعد ورثا کے حوالے کر دیا۔ پولیس کے مطابق ایک ہفتے کے دوران نہر میں نہاتے ہوئے چوٹ لگنے سے تین افراد زندگی کی بازی ہار چکے ہیں۔ دوسری جانب ضلعی انتظامیہ کی جانب سے بھی نہانے والوں کو روکنے کے کوئی انتظامات نظر نہیں آ رہے ہیں اور حسب روایت ان کا کام صرف ڈوبنے والے افراد کی لاشیں نکالنے تک ہی محدود ہو گیا ہے ۔ذرا ئع کے مطا بق گزشتہ آٹھ سالوں میں پنجاب بھر میں نہروں میں نہاتے ہوئے 2374افراد زندگی کی بازی ہار چکے ہیں جن میں زیادہ تعداد کم سن بچوں اور نوجوانوں کی ہے۔ان میں گوجرانوالہ میں 198اور سیالکوٹ میں 192افراد کی ہلاکت ہوئی جبکہ صوبائی دارالحکومت تیسرے نمبر پر آتا ہے۔

مزید :

علاقائی -