پنجاب میں مقدمات کی تفتیش کیلئے جدید ترین ٹیکنالوجی سے فائدہ اٹھانے کا فیصلہ

پنجاب میں مقدمات کی تفتیش کیلئے جدید ترین ٹیکنالوجی سے فائدہ اٹھانے کا ...

  

لاہور(کرا ئم رپورٹر)صوبے بھر میں مقدمات کی تفتیش کے نظام کو بہتر بنانے کے لئے جدید ترین ٹیکنالوجی سے بھرپور فائدہ اٹھانے کا فیصلہ کیا گیا ہے اور ملک کی تاریخ میں پہلی بار پنجاب پولیس کے لئے تقریباََ 70 Palm Scannersاور جائے واردات سے شہادتیں اکٹھی کرنے ، فنگر پرنٹس ، خاکے اور دیگر شواہد کی فوری تصدیق کے لئےMega Matcher سافٹ وےئر لگانے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔جس میں 20لاکھ ڈیٹا سیو کرنے اور 10سیکنڈ میں شہادتوں کی میچنگ کرنے کی صلاحیت موجود ہوگی۔ اس کے علاوہ پنجاب پولیس کی تمام سنٹرل جیلوں میں سی آر و ڈیسک بنانے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے اور ان ڈیسکوں پر Palm Scannerفراہم کیے جائیں گے جو جیلوں میں مجرموں کے ریکارڈ کو محفوظ کر سکیں گے۔ یہ فیصلہ گز شتہ روز سنٹرل پولیس آفس لاہور میں پنجاب پولیس میں Crime Record Management System (CRMS)اور I.Tاقدامات کا جائزہ لینے کے لئے انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب، مشتاق احمد سکھیرا کی سربراہی میں منعقد اجلاس میں کیا گیا۔ اجلاس میں ایڈیشنل آئی جی آپریشنز /انوسٹی گیشن پنجاب، کیپٹن (ر) عارف نواز، ڈی آئی جی I.T، شاہد حنیف، ڈی آئی جی ہیڈ کوارٹرز، بی اے ناصر،ڈی آئی جی آپریشنز پنجاب، عامر ذوالفقار، ڈی آئی جی آپریشنز، لاہور، ڈاکٹر حیدر آپریشنز، اے آئی جی ڈویلپمنٹ ، کامران خان، اے آئی جی لاجسٹکس، ہمایوں بشیر تارڑ،اے آئی جی فنانس، حسین حبیب امتیاز،اے آئی جی آپریشنز، احسن یونس، اے آئی جی کمپلینٹس، سید خرم علی، اے آئی جی مانیٹرنگ، وقاص الحسن ایس ایس پی CRO، لاہور ، عمر سلامت اور ڈائریکٹر کمپیوٹر بیورو، شاہین خالد کے علاوہ سی پی او کے دیگر افسران نے شرکت کی۔ اس موقع پر ایس ایس پی CRO، عمر سلامت نے آئی جی پنجاب کو بتایا کہ اب تک صوبے بھر سے 5لاکھ کرائم ڈیٹا کمپیوٹرائزڈ کر لیا گیا ہے۔ جن میں سے 3لاکھ 50ہزار کے کارڈز کو بھی سکین کرنے کا عمل مکمل کر لیا گیا ہے اور اس سسٹم سے پیچیدہ ترین کیسز کی تفتیش میں خاطر خواہ مدد حاصل ہو رہی ہے اور صرف 4ماہ میں 12انتہائی اہم کیسز کو ٹریس کر لیا گیا ہے۔آئی جی پنجاب نے کہا کہ میگا میچرسسٹم کی مدد سے پنجاب پاکستان کا سب سے بڑا کریمنل ڈیٹا بنک بن جائے گا اور یہ اپنی نوعیت کا واحد سسٹم ہو گا جس سے مجرموں کے خاکے، Data Analysis اور کیسز کو ٹریس کرنے میں اور Predictiveانٹیلی جنس سسٹم کی مدد سے تفتیشی نظام میں بہتری آئے گی اور یہ سسٹم اس وقت دنیا کے تمام ترقی یافتہ ممالک میں استعمال کیا جا رہا ہے۔ اس سسٹم سے تھانوں میں موجود 1861کے روائتی تفتیشی نظام کے خاتمے کے ساتھ ساتھ پنجاب میں Paper Less Policingکا آغاز ہو گا ۔صوبے بھر میں بنائے جانے والے فرنٹ ڈیسک کی مستقل مانیٹرنگ کے لئے سنٹرل پولیس آفس میں ایک مانیٹرنگ روم بنانے کا بھی فیصلہ کیاگیا جو اے آئی جی رینک کے افسر کی سربراہی میں کام کرے گا اور جو سی پی او سے ریجن وائز تمام تھانوں میں قائم فرنٹ ڈیسک کی براہِ راست مانیٹرنگ کرنے کے ساتھ ساتھ فیڈ بیک کے لئے بھی رابطہ رکھے گا۔ اس کے علاوہ اس مانیٹرنگ روم میںHRMISسسٹم، ٹرانسفر /پوسٹنگ سسٹم، سی آر او اور فرنٹ ڈیسک کی بھی مانیٹرنگ کی جائے گی۔

مزید :

علاقائی -