رائیل آرچرڈ ہاؤسنگ سکیم کے ترمیمی نقشہ میں بے قاعدگیوں کا انکشاف

رائیل آرچرڈ ہاؤسنگ سکیم کے ترمیمی نقشہ میں بے قاعدگیوں کا انکشاف

  

ملتان (نمائندہ خصوصی ) ایم ڈی اے کے شعبہ ٹاؤن پلاننگ کی ملی بھگت سے حبیب رفیق گروپ نے منظور شدہ نقشہ کے خلاف ورزی کرتے ہوئے رائیل آرچر ڈ ہاؤسنگ سکیم سینکڑوں ایکڑ مزید اراضی شامل کردی اور اس اراضی پر پلاٹس بنا کر اپنے الاٹیزکو فروخت بھی کر دیئے ترمیمی نقشہ کی خلاف ورزی پر بھی ایم ڈی اے کے شعبہ ٹاؤن پلاننگ کی آنکھ نہیں کھلی اضافی اراضی شامل کرنے سے رائیل آرچرڈ کا بیشتر حصہ میٹرو پولیٹن زون میں آگیا لینڈ کنٹرول برانچ کی مجرمانہ خاموشی کی وجہ سے رائیل آرچرڈ ہاؤسنگ سکیم کے خلاف کارروائی خواب بن کر رہ گئی معلوم ہوا کہ حبیب رفیق گروپ اور ڈیہڑ فیملی کی جانب سے پہلے مرحلہ میں 1336 کنال اراضی کا نقشہ جمع کرایا گیا حالانکہ اس نقشہ کی منظوری سے قبل سائیٹ پر کام جاری تھا پہلا نقشہ پر ابھی کام جاری تھا کہ ایم ڈی اے کا شعبہ ٹاؤن پلاننگ قانونی پراسس کی تکمیل میں مصروف تھا کہ اسی دوران رائل آرچرڈ ہاؤسنگ سکیم ایک اور نقشہ موصول ہوا اس نقشہ کے تحت مذکورہ ہاؤسنگ سکیم میں 363 کنال اراضی کا اضافہ کر دیا گیا ترمیمی نقشہ موصول ہونے پر شعبہ ٹاؤن پلاننگ کے ایک آفیسر نے اعتراضات عائد کئے لیکن ایم ڈی اے کے ایک اعلیٰ آفیسر نے انہیں ڈانٹ دیا اور ترمیمی نقشہ وصول کرنے کا حکم دیا جس کے بعد ترمیمی نقشہ پر کام شروع کر دیا گیا معلوم ہوا ہے رائل آرچرڈ نامی ہاؤسنگ سکیم کے نقشہ پر سنجیدہ قسم کے اعتراضات کی نوبت ہی نہیں آنے دی گئی جبکہ ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل محمد الطاف حسین ساریو کے حکم پر اس نقشہ پر اعتراضات کو چھپانے کی کوشش کی گئی اور افراتفری میں اس نقشہ کو منظور کیا گیا معلوم ہوا ہے ترمیمی نقشہ کے وصول ہونے کے صرف 8 دن بعد ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل ایم ڈی اے کے احکامات پر رائل آرچرڈ ہاؤسنگ سکیم کی منظوری دے دی گئی ایم ڈی اے اعلیٰ آفیسران اور شعبہ ٹاؤن پلاننگ کی آشیر باد کے بعد حبیب رفیق گروپ اور ڈیہڑ فیملی نے مزید اراضی خرید کر اپنی ہاؤسنگ سکیم میں شامل کرنا شروع کردی ااور اس اراضی پر سینکڑوں پلاٹس بنا کر اپنے الائیز کو فروخت کرنا شروع کر دی جبکہ موضع ڈہرانہ لنگانہ اور پنج کھوہ میں رائیل آرچرڈ کے چہار اطراف میں موجود اراضی کو رائیل آرچرڈ کی حدود میں شامل کرنا جاری رکھا ہے جس کی وجہ سے چھوٹے اراضی مالکان انتہائی ذہنی تناؤ کا شکار ہیں ان چھوٹے اراضی مالکان کے چاروں اطراف سے رائیل آرچرڈ ہاؤسنگ سکیم کے لئے اراضی کی خریداری کا عمل جاری ہے جس سے ان کے راستے بند ہو کر رہ گئے ہیں حبیب رفیق گروپ کے گارڈ ز ان کو انکی اپنی اراضی میں نہیں جانے دیتے ان چھوٹے کاشتکاروں کی آواز نہ تو ضلعی انتظامیہ سن رہی ہے اور نہ ہی ایم ڈی اے کے آفیسران کے کانوں پر جوں رینگ رہی ہے ۔ معلوم ہوا کہ رائیل آرچرڈ ہائیسنگ سکیم ایم ڈی اے کی تاریخ واحد ہاؤسنگ سکیم ہے جس کا کیس صرف چند دنوں کے دفتری پراسس کے بعد مکمل ہو گیا دوسری جانب سینکڑوں ڈویلپرز اپنی کالونیوں کے کیسز منظور کروانے کیلئے ایم ڈی اے کے آفس میں دھکے کھاتے پھر رہے ہیں لیکن ان کی کوئی سننے والا نہیں معلوم ہوا موضع ڈہرانہ لنگانہ اور موضع پنج کھوہ میں چھوٹے اراضی مالکان کے راستے بند کرنے کے بعد اب ایک سیاسی شخصیت ان کی زمینوں پر ہاتھ صاف کرنے کیلئے سرگرم ہے یہ سیاسی شخصیت اراضی مالکان کو انکے باپ داد کی جائیداد اونے پونے داموں فروخت کرکے دوسرے علاقوں میں اراضی خریدنے پر مجبور کر رہی ہے جبکہ اہل علاقہ کے کاشتکار معمولی مزاحمت کر رہے لیکن کوئی بھی سرکاری نمائندہ ان کی بات سننے کو تیار نہیں ہے ۔

مزید :

کراچی صفحہ اول -