کشن گنگا ہائیڈ روڈ یم پر پاکستان کی شکایات ناکافی ، پاک بھارت آبی تنازعے کا پرامن حل چاہتے ہیں : عالمی بینک

کشن گنگا ہائیڈ روڈ یم پر پاکستان کی شکایات ناکافی ، پاک بھارت آبی تنازعے کا ...

واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک )عالمی بینک نے سندھ طاس معاہدے اور کشن گنگا ہائیڈرو منصوبہ پر پاکستان کی شکایات کو ناکافی قرار دیدیا۔ بھا رت کی جانب سے سندھ طاس معاہدے کی خلاف ورزیوں پر اٹارنی جنرل اشتر اوصاف کی قیادت میں 4 رکنی وفد نے عالمی بینک کے صدر اور دیگر حکام سے ملاقات کی اور پاکستان کے تحفظات سے آگاہ کیا۔پاکستانی وفد نے معاہدے کے ضامن کی حیثیت سے عالمی بینک سے کردار ادا کرنے کی درخواست بھی کی۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق بات چیت میں سندھ طاس معاہدہ کے دائرہ میں رہتے ہوئے مسئلہ کے پْر ا من حل کے مواقع پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا لیکن پاکستانی وفد سے ملاقات تنازع کے حل کیلئے کسی طریقہ کار پر اتفاق رائے کے بغیر ختم ہو گئی ۔ جبکہ عالمی بینک کا کہنا ہے تنازعات اور اختلافات پر عالمی بینک کا کردار انتہائی محدود ہے۔عالمی بینک کے سربراہ اور حکام سے 3 روزہ بات چیت کے سلسلے کے دوران بھارت کی سندھ طاس معاہدے کی خلاف ورزی، کشن گنگا، رتلے اور دیگر 12 منصوبوں کی تعمیر پر بات چیت کی جائے گی۔ترجمان عالمی بینک کے مطابق سندھ طاس معاہدہ ایک انتہائی اہم بین الاقوامی سمجھوتہ ہے جو پانی کی مینجمنٹ سے متعلق موجودہ اور مستقبل کے چیلنجوں سے نمٹنے کیلئے پاکستان اور بھارت کو تعاون کا موثر فریم ورک فراہم کرتا ہے تاکہ ترقیاتی اہداف کا حصول اور انسانی ضروریات کو پورا کیا جا سکے۔واضح رہے حال ہی میں بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے سندھ طاس معاہدے کیخلاف بنائے گئے کشن گنگا پاور پلانٹ کا افتتاح کیا تھا، جس پر پاکستان نے اعتراض اٹھایا تھا۔

شکایات ناکافی

نیویارک (این این آئی)عالمی بینک نے کہاہے کہ وہ پاکستان اور بھارت کے درمیان آبی تنازع کا پرامن حل نکالنے کیلئے کوشاں ہے جس کیلئے اسلام آباد کے وفد کے ساتھ بات چیت کا آغاز کردیا گیا ہے۔عالمی بینک کی ترجمان ایلینا کرابان نے ایک انٹرویومیں کہاکہ عالمی بینک کے حکام نے پاکستانی حکام کے ساتھ 21 اور 22 مئی کو سندھ طاس معاہدے کی روشنی میں مذکورہ ڈیم کے مسائلے کے حوالے سے ملاقات کی۔انہوں نے بتایا کہ ملاقات کے دوران پاکستان حکام کی جانب سے بھارتی ڈیم پر تحفظات زیرِ بحث آئے، سندھ طاس معا ہد ے کی روشنی میں اس کا پْر امن حل نکالنے پر زور دیا گیا۔عالمی بین کی ترجمان نے سندھ طاس معاہدے کی اہمیت اجاگر کرتے ہوئے کہا کہ یہ معاہدہ ایک اہم ترین بین الاقوامی معاہدہ ہے جو پاکستان اور بھارت کو اپنے عوام کی ضروریات پوری کرنے کے لیے حال اور مستقبل میں پانی کے موثر انتظام کے حوالے سے چیلنجز کا سامنا کرنے کیلئے ایک ضروری تعاون پر مبنی فریم روک فراہم کرتا ہے۔عالمی بینک نے کہا کہ یہ ملاقاتیں بھی پاکستان کی درخواست پر کی گئی ہیں ۔سندھ طاس معاہدے کی حفاظت کے بارے میں عالمی بینک نے کہا کہ تقریباً نصف صد ی سے پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگی کے باوجود سندھ طاس معاہدہ قائم رہا، جبکہ اس نے آب پاشی اور ہائیڈرو پاور ڈیولپمنٹ کے لیے فریم ورک بھی فراہم کیا۔

ورلڈ بینک

مزید : صفحہ اول

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...