ضلع شانگلہ میں کوئلہ کان کے مزدوروں میں ٹی بی مرض کی تشخیص

ضلع شانگلہ میں کوئلہ کان کے مزدوروں میں ٹی بی مرض کی تشخیص

  

پشاور(سٹاف رپورٹر)محکمہ صحت اور ڈوپاسی کے تعاون سے ضلع شانگلہ میں کوئلہ کان کے مزدوروں میں ٹی بی مرض کی تشخیص، ان کی رجسٹریشن اور مزدوروں کی کل تعداد کا تعین کرنے کا عمل شروع ہوگیا،صوبائی وزیر محنت شوکت علی یوسفزئی نے انصاف ڈاکٹر فورم کے ضلعی صدر ڈاکٹر شریف اللہ ثاقب کی رہائش گاہ پر اس کا باقاعدہ افتتاح کیا۔ تقریب میں تحریک انصاف ملاکنڈ ڈویژن کے سینئر نائب صدر حاجی سدید الرحمان، ضلع شانگلہ کے صدر وقار احمد خان، ضلعی جنرل سیکرٹری حاجی عبدالمولی خان، ضلعی سیکرٹری اطلاعات اسلام زادہ، حیات خان بشام، سید عالم، آصف علی خان، ظفر علی خان،پیر امان، شکیل خان، ڈاکٹر تواب یوسفزئی اور ملک عبید اللہ عرف شاہ جی خان بھی صوبائی وزیر کے ہمراہ تھے۔ محکمہ صحت شانگلہ کی طرف سے ڈپٹی ڈی ایچ او ڈاکٹر غفور خان، ڈاکٹر فضل خالق اور ڈوپاسی کے نمائندے تقریب میں شریک ہوئے۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر محنت و ثقافت شوکت یوسفزئی نے کہا کہ شانگلہ کے ستر فیصد نوجوان کوئلہ کان کی مزدوری کر رہے ہیں ان میں اکثریت یا تو معذور ہوجاتے ہیں یا ٹی بی کا شکار جو انتہائی تکلیف دہ بات ہے انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی حکومت کی کوشش ہے کہ نوجوانوں کو معذوری اور ٹی بی کا شکار ہونے سے بچایاجائے۔ انہوں نے کہا کہ ٹی بی کی تشخیص کے عمل کے دوران کوئلہ کان مزدوروں کی درست تعداد کا تعین بھی ہو سکے گا شوکت یوسفزئی نے کہا کہ کوئلے کی کان کی مزدوری انتہائی خطرناک اور مشکل ترین کام ہے اور پورے پاکستان میں صرف شانگلہ اور سوات کے لوگ ہی کوئلے کی مزدوری کر سکتے ہیں تاہم اس دوران کئی لوگ موت کے منہ میں بھی جا چکے ہیں یا پھر وہ ساری زندگی کے لیے معذور بن چکے ہیں۔ شوکت یوسفزئی نے کہا کہ کوئلے کی کانوں میں کام کرنے والے مزدوروں کا تحفظ یقینی بنایا جائے گا،وزیر اعلیٰ محمود خان پہلے ہی کوئلے کی کانوں کو محفوظ بنانے اور اس کے اندر اصلاحات لانے کی ہدایت دے چکے ہیں جس پر کام شروع ہو چکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں اپنے لوگوں کو کوئلے کی مزدوری سے روکنے کیلئے سیاحت کو فروغ دینا ہوگا سیاحت پر توجہ دے کر ہم اپنی مشکلات کم کر سکتے ہیں۔ انہوں نے وزیر اعلیٰ محمود خان کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ وہ اس سلسلے میں بھرپور تعاون کر رہے ہیں جس سے شانگلہ کی پسماندگی دور ہو سکے گی۔تقریب کے بعد یونین کونسل ملک خیل کے مختلف ویلج کونسلز کے وفود نے شوکت یوسفزئی سے ملاقاتیں کیں اور اپنے مسائل سے آگاہ کیا۔ صوبائی وزیر نے یقین دلایا کہ شلخو سر اور کڑال سر کو ٹورازم میں شامل کرنے کے لئے وزیر اعلیٰ محمود خان سے درخواست کی جائے گی۔ اس موقع پر علاقے کے کئی خاندانوں نے تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان کیا اور شوکت یوسفزئی کی قیادت پر اعتماد کا اظہار کیا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -