تلیری کینال مظفر گڑھ کی جبر ی بندش کیخلاف کاشتکاروں کا احتجاج، نعرے بازی

  تلیری کینال مظفر گڑھ کی جبر ی بندش کیخلاف کاشتکاروں کا احتجاج، نعرے بازی

  

  مظفرگڑھ (نامہ نگار)تلیری کینال مظفرگڑھ کی جبری بندش کا سلسلہ تاحال جاری ہے اتوار کے روز 6 مقامات پر کسانوں (بقیہ نمبر39صفحہ6پر)

 کا احتجاج، گو ایکسئین گو کے نعرے،نہری پانی کی فراہمی کا مطالبہ۔تفصیل کے مطابق اتوار کے روز درجنوں کسانوں نے خان گڑھ، منڈاچوک، لیاقت آباد، وسندیوالی، آڑا، پیرجہانیاں سمیت دیگر مقامات پر تلیری کینال مظفرگڑھ کی جبری اور خودساختہ بندش پر احتجاج کرتے ہوئے "گو ایکسئین انہار مظفرگڑھ گو" کے نعرے لگائے جبکہ کسانوں مہرراشدنصیرسیال، میاں خالد ندیم بھٹی، معاذاللہ خان، محمد یعقوب خان، میاں اللہ ڈتہ، شبیراحمدخان، دلدارحسین,اللہ بچایا، ملک فیض بخش، حافظ اے ڈی خان، نذیراحمدملک، محمد اقبال ملک سمیت دیگر کا کہنا تھا کہ گزشتہ 8 ماہ سے تلیری کینال کی بندش جاری ہے مگر انہار حکام سوائے طفل تسلیاں کے پانی کی فراہمی میں رکاوٹ بن کر کسانوں کے معاشی بحران کا موجب بن رہے ہیں انہوں نیکہا کہ صوبائی وزیر آبپاشی نے کسانوں کی شکایات پر خاموش ہیں جو کہ قابل مذمت امر ہے انہوں نیکہا کہ موجودہ حکومت نے ضلع مظفرگڑھ کے کسانوں کو لاوارث چھوڑ رکھا ہے جبکہ انہار حکام بھی مفت کی تنخواہیں ہڑپ کر رہے ہیں اور کسان کش پالیسیوں پر گامزن ہیں انہوں نیکہا کہ کسانوں کے حقوق پر ڈاکہ ڈالا جا رہا ہے جس کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے انہوں نے تلیری کینال مظفرگڑھ میں فوری نہری پانی چالو کرنے کا مطالبہ کیا ہے بصورت دیگر انصاف کیلئے عدالت عالیہ کا دروازہ کھٹکھٹانے کا اعلان کیا ہے۔

نعرے بازی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -