جنوبی کوریا میں آوارہ کتوں نے گروپوں کی شکل میں نکل کر لوگوں پر حملے شرو ع کردئیے ،ایک خاتون کو گلے پر کاٹ کر مارڈالا

جنوبی کوریا میں آوارہ کتوں نے گروپوں کی شکل میں نکل کر لوگوں پر حملے شرو ع ...
جنوبی کوریا میں آوارہ کتوں نے گروپوں کی شکل میں نکل کر لوگوں پر حملے شرو ع کردئیے ،ایک خاتون کو گلے پر کاٹ کر مارڈالا

  

کوریا (رضا شاہ)سیول کے نواحی علاقے میں 59 سالہ خاتون کی ایک آوارہ کتے کے گردن پر کاٹنے سے کچھ گھنٹے بعد موت واقع ہو گئی۔ تفصیلات کے مطابق موت زیادہ خون بہنے کی وجہ سے ہوئی۔ کتے کے حملے کو قریب لگے ہوئے سی سی ٹی وی کیمرے سے دیکھنے کے بعد پولیس نے کتے کو پکڑ لیا۔ یہ پہلا واقعہ نہیں ہے کہ کوریا میں کتے نے کسی پرحملہ کیا ہو بلکہ آج کل جنوبی کوریا میں پالتو اور آوارہ کتے گروپوں کی شکل میں نکل کر انسانوں اور جانوروں پر حملے کر رہے ہیں۔ گزشتہ ہفتے کیوںگسانگ نام دو صوبے کے کیمہے شہرکے ایک پولٹری فارم جس میں آٹھ سو مرغیاں موجود تھی پر آوارہ کتوں نے حملہ کیا۔ اس پولٹری فارم پر یہ کتوں کا دوسرا حملہ تھا اس سے پچھلے ہفتے آوارہ کتوں کے حملے میں250 مرغیاں ہلاک ہو گئی تھیں۔ کوریا کے جزیرے جیجو میں اس ماہ کے اوائل میں ایک آوارہ کتے کے حملے سے ایک خاتون اور اس کا پالتو کتا بھی شدید زخمی ہوگئے تھے۔ اس جزیرے میں لگ بھگ سات ہزار آوارہ کتوں کو سالانہ پکڑ کر جانوروں کی پناہ گاہوں میں بھیجا جا رہا ہے۔ اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ سال کوریا میں 95 ہزار 261 کتوں کو پکڑ کر جانوروں کی پناہ گاہ میں منتقل کیا گیا تھا۔ فروری میں ایک قانون پاس کیا گیا ہے جس کے مطابق پالتو جانوروں کے مالکان کو کسی دوسرے جانور کو زخمی یا ہلاک کرنے کی صورت میں تین ملین کورین وان تقریبا 2 ہزار660 ڈالر کا جرمانہ کیا جا سکتا ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -