دائرہ کار پر آپ کی دلیل درست مان لیں تو سپریم کورٹ رولز کالعدم ہو جائیں گے،جسٹس منیب اختر 

دائرہ کار پر آپ کی دلیل درست مان لیں تو سپریم کورٹ رولز کالعدم ہو جائیں ...
دائرہ کار پر آپ کی دلیل درست مان لیں تو سپریم کورٹ رولز کالعدم ہو جائیں گے،جسٹس منیب اختر 

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)جسٹس منیب اختر نے الیکشن کمیشن کی نظرثانی درخواست پر ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ جسٹس منیب اختر نے کہاکہ دائرہ کار پر آپ کی دلیل درست مان لیں تو سپریم کورٹ رولز کالعدم ہو جائیں گے،سپریم کورٹ رولز میں نظرثانی پر ابھی تک کوئی ترمیم نہیں کی گئی،دائرہ کار بڑھایا تو کئی سال پرانے مقدمات بھی آجائیں گے،کیا 10 سال بعد کوئی نظرثانی دائر کرکے کہہ سکتا ہے ،رولز مکمل لاگو نہیں ہوتے،آپ کو شاید اپنی دلیل مانے جانے کے نتائج کا اندازہ نہیں ہے۔

نجی ٹی وی چینل دنیا نیوز کے مطابق سپریم کورٹ میں پنجاب انتخابات سے متعلق نظرثانی درخواست پر دلائل دیتے ہوئے وکیل الیکشن کمیشن نے کہاکہ نظرثانی دائر کرنے کیلئے مدت ختم نہیں ہونی چاہئے،جسٹس منیب اختر نے کہاکہ 70 سال میں یہ نکتہ آپ نے دریافت ہے تو نتائج بھی بتائیں۔

جسٹس اعجازالاحسن نے کہاکہ نظرثانی کا دائرہ کار سپریم کورٹ رولز میں موجود ہے،وکیل الیکشن کمیشن نے کہاکہ رولز نظرثانی کے آئینی اقدام پر قدغن نہیں لگا سکتے،جسٹس اعجازالاحسن نے کہا کہ آئین میں نظرثانی دائر کرنے کی مدت بھی نہیں دی گئی،کیا فیصلے کے 20 سال بعد نظرثانی دائر ہو سکتی ہے؟اگر نظرثانی کی مدت والا رول لوگو ہو سکتا ہے تو دائرہ کار کیسے نہیں ہوگا؟

وکیل الیکشن کمیشن نے کہاکہ سپریم کورٹ رولز بنانے والوں نے دائرہ کار آئینی مقدمات میں محدود نہیں رکھا،ملک کے تین بہترین ججز کے سامنے اپنا مقدمہ پیش کررہا ہوں،وقت کے ساتھ قانون تبدیل ہوتا رہتا ہے۔