بھار ت ، رکشہ ڈرائیور کی بے حسی ، حادثے میں ہلاک مسافر کاسامان لیکر فرار

بھار ت ، رکشہ ڈرائیور کی بے حسی ، حادثے میں ہلاک مسافر کاسامان لیکر فرار
بھار ت ، رکشہ ڈرائیور کی بے حسی ، حادثے میں ہلاک مسافر کاسامان لیکر فرار

  

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک )بھار ت کے دارالحکومت نئی دہلی میں ایک رکشہ ڈرائیور نے حادثے میں ایک مسافر سافٹ ویئر انجینئرکی ہلاکت کے دوران ایسا شرمناک فعل سرانجام دیا ہے کہ آپ جان کر سر پکڑ لیں گے ، اس رکشہ ڈرائیور کے اقدام نے انسانیت کو تار تار کر دیا ہے۔ہندوستان ٹائمز میں شائع خبر میں بتایا گیا ہے کہ 42سافٹ ویئر انجینئر سبودھ شریواستواپنی بیوی اور بیٹے کے ہمراہ رات گئے انند وہار ریلوے سٹیشن سے اپنے رہائشی علاقے میں جانے کے لئے ایک رکشہ میں سوار ہوا۔ ابھی کوئی 15کلو میٹر کا فاصلہ طے ہوا تھا کہ رکشہ اپنے تیز رفتاری کی وجہ سے بے قابو ہر کر الٹ گیا اور دو روئی ’ڈیوائیڈر‘سے ٹکرا گیا۔ سافٹ ویئر انجینئر زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا جبکہ اس کی بیوی اور بیٹا شدید زخمی ہو گئے جب کہ بے حس رکشہ ڈرائیو خون میں لت پڑی فیملی کو چھوڑ کر اور ان کا سامان لے کر فرار ہو گیا۔ زخمی خاتون نے اپنی دھندلاتی ہوئی نظر سے دیکھا کہ اس کا شوہر بْری طرح سے رکشہ کے نیچے آ گیا ہے اور بیٹا بھی شدید زخمی ہے جبکہ ڈرائیور انہیں تڑپتا چھوڑ کر ان کا سامان لے کر فرار ہو رہا ہے۔ خاتون نے بتایاکہ رکشہ ڈرائیور نے میرے شوہر کو رکشہ کے نیچے سے باہر نکالا اور رکشہ سائیڈ پر کیا اور پھر اس نے ہمارے سامان سے بھر تین بیگ اٹھائے ، ہمارا لیپ ٹاپ اور دیگر قیمتی اشیاء اسی میں موجود تھیں۔ اس دوران میں سمجھی وہ ہمیں ہسپتال لے جانے والا ہے لیکن اس نے ایک نظر ہمیں دیکھا اور پھر رکشہ سمیت فرار ہو گیا۔خاتون نے بتایا کہ میں سارا معاملہ دیکھ کرسکتے میں آ گئی۔خاتون نے مزید بتایا ہے کہ رکشے ڈرائیور کے ہمیں تڑپتا چھوڑ کر فرار ہونے کے بعد میں نے مایوسی کے عالم میں ایک منی ٹرک کو مدد کے لئے روکنا چاہا مگر ڈرائیور نے ہمیں ایک نظر دیکھا اور چلتا بنا۔ کافی دیر بعد ایک کار ہمارے قریب آ کر رکی جن میں سوار چار نوجوانوں نے پولیس کو کال کی جبکہ قریب واقع ہوٹل کے ایک سکیورٹی گارڈ نے ہمیں پانی پلایااور میرے بیٹے کا خون آلودہ چہرہ دھویا۔انہیں ہسپتال پہنچایا گیا تاہم دیر ہونے کے باعث خاتون کا شوہر دم توڑ چکا تھا جبکہ خاتون تاحال نجی ہسپتال میں زیر علاج ہے۔ خاتون نے پولیس کو بتایا کہ اس رکشہ ڈرائیور کی عمر 20سال کے لگ بھگ تھی جبکہ منی ٹرک والا ڈرائیور پر مجھے شک ہے کہ وہ رکشہ ڈرائیور کے ساتھ کام کرتا ہے۔ میں دونوں کو پہچان سکتی ہوں۔امید کرتی ہوں پولیس انہیں گرفتار کر کے ہمیں مرتا چھوڑ کر بھاگنے کے جرم میں سزا دلوائے گی۔

مزید : صفحہ آخر