سزاﺅں میں اضافے کے لئے قانون سازی ہونی چاہیے،سپریم کورٹ

سزاﺅں میں اضافے کے لئے قانون سازی ہونی چاہیے،سپریم کورٹ

لاہور(نامہ نگار خصوصی)سپریم کورٹ نے قرار دیا ہے کہ پارلیمنٹ کو قتل سمیت فوجداری جرائم کی سزاﺅں میں اضافہ کے لئے قانون سازی کرنی چاہیے، بدقسمتی سے ہم لوگ غیرفطری باتوں کو ثابت کرنے میں لگے ہوئے ہیں، قتل کے بیشتر مقدمات میں جھوٹ بولا جاتا ہے۔معاشرے میں قانون کی بالادستی تب ہو گی جب مجرموں کو سخت سے سخت سزائیں دی جائیں گی۔مسٹرجسٹس اعجاز احمد چودھری کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے یہ ریمارکس شہری یاسر عباس کے قتل میں مجرم مالک احمد کی عمرقید ختم کرکے دوبارہ سزائے موت بحال کرنے کی اپیلوں کی سماعت کے دوران دیئے۔مدعی کے وکلائنے موقف اختیار کیا کہ ہائیکورٹ نے حقائق اور قاتل کی نیت دیکھے بغیر سزائے موت کو عمر قید میں تبدیل کر دیا ہے لہذا سزائے موت بحال کی جائے، مجرم مالک احمد کے وکیل اعظم نذیر تارڑ نے موقف اختیار کیا کہ ہائیکورٹ کا فیصلہ درست ہے، مجرم کی یاسر عباس کو قتل کرنے کی نیت نہیں تھی، اس پر جسٹس اعجاز احمد چودھری نے ریمارکس دیئے کہ یہ بدقسمتی ہے کہ قتل کے مقدمات میں سارا زور وقوعہ ثابت کرنے کی بجائے ملزم کی نیت ثابت کرنے پر لگایا جاتا ہے،یہ کیسے ہو سکتا ہے کہ کسی کی نیت کا پتہ چلایا جا سکے، بدقسمتی سے ہم لوگ غیرفطری باتوں کو ثابت کرنے میں لگے ہوئے ہیں، قتل کے بیشتر مقدمات میں جھوٹ بولا جاتا ہے اور مجرموں کی نوے فیصد بریت کی وجہ بھی جھوٹ ہی ہے کسی حد تک مجرموں کے بری ہونے کی ذمہ دار عدلیہ بھی ہے مگر زیادہ قصور جھوٹ بولنے والے فریقین کا ہوتا ہے۔ فاضل جج نے مزید ریمارکس دیئے کہ سعودی عرب میں قتل کا واقعہ ہوا ہو تو چند دنوں میں مجرم کو سزا مل جاتی ہے، اسی لئے سعودی عرب میں امن بھی ہے مگر ہمارے معاشرے میں فریقین شروعات ہی جھوٹ سے کرتے ہیں، قتل سمیت فوجداری مقدما ت میں چند برس کی سزا کوئی سزا نہیں ہے، چند برس سزا کے بعد مجرم ضمانت پر جیل سے رہا ہو جاتا ہے، پارلیمنٹ کو قتل سمیت فوجداری مقدمات میں سزاﺅں کو بڑھانے کیلئے قانون سازی کرنی چاہیے، جس کے بچے یتیم ہوتے ہیں، اس کے قاتل کو سخت سے سخت سزا ملنی چاہیے، فاضل جج نے مزید ریمارکس دیئے کہ بیشتر مقدمات میں حالات ایسے ہوتے ہیں کہ عدالتوں کو ملزموں کے فائدے کا فیصلہ دینا پڑتا ہے، فاضل بنچ نے مذکورہ ریمارکس دیتے ہوئے مجرم مالک احمد کی سزائے موت بڑھانے کی درخواست مسترد کر دی۔

مزید : لاہور

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...