نجی ایئر لائن کے پائلٹ عصمت محمود کے جسمانی ریمانڈ میں 3دن کی توسیع

نجی ایئر لائن کے پائلٹ عصمت محمود کے جسمانی ریمانڈ میں 3دن کی توسیع
نجی ایئر لائن کے پائلٹ عصمت محمود کے جسمانی ریمانڈ میں 3دن کی توسیع

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

لاہور(نامہ نگار)طیارہ حادثہ کیس میں گرفتار شاہین ایئرلائنزکے پائلٹ عصمت محمودکو جسمانی ریمانڈ مکمل ہونے پر انسداد دہشت گردی کی عدالت میں پیش کیا گیا، مزید تفتیش کے لئے پائلٹ کے جسمانی ریمانڈ میں تین روز کی توسیع کر دی گئی۔شاہین ایئرلائنزکے پائلٹ عصمت محمودکوانسداد دہشت گردی کی عدالت کے ایڈمن جج خواجہ ظفراقبال کی عدالت میں پیش کیاگیا۔انسپکٹر فرحان علی نے استدعا کی کہ ابھی تفتیش مکمل نہیں ہوئی، فلائنگ لائسنس برآمد کرانااور ساتھی پائلٹ کا بیان قلمبند کرنے سمیت دیگرشواہد پر تفتیش کرنے کیلئے مزید جسمانی ریمانڈ دیا جائے۔ ملزم کے وکیل حسن اقبال وڑائچ نے کہاکہ پولیس کو سات روزہ جسمانی ریمانڈ کے دوران کوئی ایسی شہادت نہیں ملی جس سے دہشت گردی ثابت ہوتی ہو۔ حادثہ لینڈنگ گیئرمیں خرابی کی وجہ سے پیش آیا۔ طیارہ اڑنے کے قابل نہیں تھا لیکن پائلٹ نے خراب طیارے کو اپنی مہارت کی وجہ سے خوفناک حادثے سے بچایا۔سول ایوی ایشن اتھارٹی نے ایئر لائنز کی ساکھ اور بزنس بچانے کیلئے پائلٹ کے خلاف مقدمہ درج کرایا۔ دوسری جانب مقدمے کے مدعی سول ایوی ایشن اتھارٹی کے وکیل مشتاق عباس نے دلائل میں کہاکہ پائلٹ نشے کی حالت میں تھا۔ اس نے مسافروں کی زندگی کوخطرے میں ڈالا۔ ملزم کاتعلق کسی دہشت گردتنظیم سیبھی ہوسکتاہے،تفتیش مکمل ہونا ضروری ہے۔ عدالت نے دلائل کے بعد پائلٹ کے جسمانی ریمانڈ میں تین روز کی توسیع کرتے پولیس کے حوالے کر دیاہے۔

مزید : لاہور