دینہ،گاڑیوں کو فٹنس سرٹیفیکیٹ بغیر چیکنگ کے جاری کیے جانیکا انکشاف

دینہ،گاڑیوں کو فٹنس سرٹیفیکیٹ بغیر چیکنگ کے جاری کیے جانیکا انکشاف

دینہ ( لیاقت علی سے ) کھٹارا ویگنیں بسیں شہریوں کااپنی جان کو رسک میں ڈال کر کھٹارا ٹرانسپورٹ میں سفر کرنا مقدر بن گیا ، کئی سالوں پرانی ویگنیں بسیں ضلع جہلم میں چل رہی ہے مالکان پیسے بچانے کے لئے گاڑیوں کی مرمتی کروانے سے قاصر ،کسی بھی وقت کوئی بڑا نا خوشگوار واقعہ ہونے کا خدشہ متعدد گاڑیوں کے فٹنس سرٹیفکیٹ ، گاڑیوں کی بغیر حا ضری اور بغیر چیکنگ کے دینے کا انکشاف انتظامیہ خاموش ،پٹرول سستا ہونے کے باوجود کرئے کم نہ ہوسکے پرانی کھٹارا ویگنوں بسوں میں خو د ساختہ سیٹیں لگا رکھی ہیں کمائی کے چکر میں سواریاں زیادہ بٹھا لی جاتی ہیں جس وجہ سے سفر کرنے میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے : مسافروں کی ’’میڈیا ‘‘ سے گفتگو ۔ تفصیلات کے مطابق کھٹا را ٹرانسپورٹ کے باعث آئے روز ایکسیڈنٹ حا دثات معمول بن گئے پرانی ویگنوں بسوں میں سفر کرنا شہریوں کے لئے اجیرن بن گیا کسی بھی وقت کوئی بڑا نا خوشگوار حا دثہ پیش آسکتا ہے کئی سالوں پرانی ٹرانسپورٹ جن کے ٹائر تک گھس چکے ہیں سڑک پر رواں دواں ہوتی ہیں جن کو کوئی پوچھنے والا نہ ہے گزشتہ روز ’’میڈیا‘‘ سروے کے دوران مسافروں اور شہریوں کی ایک بڑی تعداد نے بتایا کہ کھٹارا ٹرا نسپورٹ میں اب سفر کرنا ہمارا مقد ر بن چکا ہے کھٹارا ٹرانسپورٹ کے باعث آئے روز حا دثات معمول بن چکے ہیں ان کو کوئی پوچھنے والا نہ ہے زنگ آلود گاڑیاں بڑے دیدہ دلیری سے سڑکوں پر گھوم رہی ہوتی ہیں چوری چھپے زیادہ کرائے وصول کرنا ڈرائیور حضرات کا وطیرہ بن چکا ہے مالکان کی ملی بھگت سے متعدد ویگینوں اور بسوں میں خود ساختہ سیٹیں لگا رکھی ہے گاڑیوں کو اوو ر لوڈ کیا جا تا ہے جس سے سفر میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے اگر مسافر گاڑی ڈرائیور سے کہے بھی کہ زیادہ سواریاں نہ بٹھائی جائیں تو وہ بد تمیزی پر اتر آتے ہیں اور گاڑی سے اتار دیتے ہیں دینہ سے جہلم چلنے والی گا ڑیوں کا عملہ مسافروں کو بھیڑ بکریوں کی طرح سوار کر کے زلیل و خوار کرنا اپنا حق سمجھتے ہیں اور اوباشوں کی جانب دوران سفر گاڑی میں سوار خواتین سے غیر اخلاقی حرکات کے واقعات محض اس لئے منظر عام پر آتے ہیں کہ مسافر گاڑیوں کے عملے نے خواتین سیٹ کے سامنے موجود پھٹے پر نوجوانوں کے علاوہ مردوں کو بھی خواتین کے سامنے بٹھا دیتے ہیں دوران سفر اگر نا محرم مردوں کیساتھ بیٹھنے سے خواتین انکار کریں تو گاڑیوں کا عملہ بے عزت کرنے کے علاوہ جان بوجھ کر ویران جگہ پر گاڑی سے نیچے اتار نے سے بھی گریز نہیں کرتا ٹریفک پولیس اور موٹر وے پولیس کا کاروائی نہ کرنا مسافروں اور شہریوں کے لئے لمحہ فکریہ بن چکا ہے گزشتہ دنوں کھٹارا مسافر ٹرانسپورٹ کے باعث دینہ شہر میں متعدد ایکسیڈنٹ ہوئے 2سکول بسیں کھٹارا ٹائر ختم ہونے کے باعث بے قابو ہو کر الٹ گئی جس کے نتیجہ میں متعدد بچے زخمی ہوئے متعدد کی ہڈیاں ٹوٹ گئی اور کئی جان کی بازی ہار گئے کئی معجزاتی طور پر بچ گئے متعدد گاڑیویاں فٹنس سرٹیفکیٹ کے بغیر روڈ پر چل رہی اور مسافروں کی زندگیوں سے کھیل رہی ہیں فٹنس سرٹیفکیٹ جاری کرنے سے قبل اس بات کی تسلی کرنا بہت ضروری ہو تا ہے کہ آیا گاڑی روڈ پر چلنے کے قابل ہے بھی کہ نہیں لیکن ایسی گاڑیاں جو روڈ پر چلنے کے قابل نہ ہوں اور بغیر گاڑی دیکھے فٹنس سر ٹیفکیٹ جاری کر دیا جائے تو آنے والے وقت میں ایسی گاڑیاں جن میں عمو ما سکول سے بچے لیجانے کا کام کرتی ہیں کسی بڑے حا دثے کا سبب بن سکتی ہیں مسافروں اور شہریوں نے ’’میڈیا ‘‘ کے توسط سے ڈ ی سی او جہلم ، ڈی پی او جہلم اور ڈی ایس پی ٹریفک رالپنڈی سے مطالبہ کیا ہے کہ ضلع جہلم روٹ پر چلنے والی مسافر کھٹارا گاڑیوں کو تبدیل کروایا جا ئے اور گنجائش سے زیادہ افراد کو سوار کرنے اور لوکل روٹ پر چلنے و الی گاڑیوں میں نصب شدہ پھٹوں کو ہنگامی بنیادوں پر ختم کروایا جا ئے اور قانون نا فذ کرنے والاے اداروں کے احکامات کی خلاف ورزی کرنے والے ٹرانسپورٹروں کے خلاف سخت سے سخت کاروائی عمل میں لائیں تاکہ مسافر با عزت اور محفوظ طریقے سے سفر کر سکیں ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر