شرح سود کاروبار کی ترقی کی راہ میں رکاوٹ ہے: میاں نعمان کبیر

شرح سود کاروبار کی ترقی کی راہ میں رکاوٹ ہے: میاں نعمان کبیر

  



لاہور (آن لائن) چیئرمین پاکستان انڈسٹریل اینڈ ٹریڈرز ایسوسی ایشنز فرنٹ (پیاف) میاں نعمان کبیر نے کہا ہے کہ تجارتی خسارہ میں تین ماہ کے دوران 34.85فیصد کمی حکومت کی مضبوط معاشی پالیسیوں کا ثمر ہے۔تجارتی خسار ہ میں کمی حکومت کی بڑی کامیابی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ادارہ شماریات پاکستان کے اعداد و شمار کے مطابق رواں مالی سال کی پہلی سہ ماہی جولائی تا ستمبر2019کے دوران برآمدامت میں 2.75فیصد اضافہ جبکہ درآمدات میں 20.59فیصد کمی کے نتیجہ میں تجارتی خسارہ میں 34.85فیصد کمی ہوئی ہے۔ 13.25 فیصد شرح سود اس وقت کاروبار کی ترقی میں اہم رکاوٹ ہے۔

اس میں کمی ناگزیر تھی، مہنگائی میں اضافے کی ایک اہم وجہ شرح سود کا زیادہ ہونا ہے۔موجودہ حکومت کے دور میں ملکی قرض جی ڈ ی پی کا 80فیصد ہوگیا ہے۔روپے کی قدر میں کمی سے برآمدات میں بہتری آنا شروع ہوگئی ہے بزنس کے لئے ماحول میں مزید بہتری لانا ہو گی۔ان خیالات کا اظہار چیئرمین پیاف میاں نعمان کبیر نے سینئر وائس چیئرمین ناصر حمید خان اور وائس چیئرمین جاوید اقبال صدیقی کے ہمراہ گلبرگ آفس میں تاجروں کے ایک وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ درآمدات میں کمی اور برآمدات میں اضافے سے تجارتی خسارے میں کمی سے ملکی معیشت مستحکم ہوگی اور حکومتی زرمبادلہ کے ذخائر میں اضافہ ہوگا۔انہوں نے کہا کہ گزشتہ 3ماہ میں کوئی قرضہ نہ لینا اور حکومتی اخراجات کو کنٹرول کرنے سے حکومت کے زرمبادلہ کے ذخائر مستحکم ہوئے ہیں۔رواں مالی سال کے پہلے تین مہینوں میں بیرونی تجارت پر قابو پانے اور باہر سے سرمایہ کاری کیلئے 340ملین ڈالرز کے اضافہ سے صنعتی شعبہ کی سرگرمیاں بڑھ رہی ہیں جس سے صنعتی شعبہ میں ملازمتوں میں اضافہ سے بے روزگاری میں کمی ہوگی۔

مزید : کامرس /رائے