سانحہ ماڈل ٹاؤن،دہشتگردی کی دفعات ختم کرنے کیلئے عدالت کا اختیار چیلنج

سانحہ ماڈل ٹاؤن،دہشتگردی کی دفعات ختم کرنے کیلئے عدالت کا اختیار چیلنج

  



لاہور(نامہ نگار)سانحہ ماڈل ٹاؤن کے 5سال پرانے کیس میں دہشت گردی کی دفعات ختم کرنے کے لئے انسداد دہشت گردی کی عدالت کے اختیار سماعت کو چیلنج کر دیا گیاہے،انسداددہشت گردی کی عدالت میں سابق انسپکٹر فیصل ٹاون اور پولیس کیس کے مدعی رضوان قادر کے وکیل برھان معظم ملک نے سپریم کورٹ کے حکم کی روشنی میں اسے چیلنج کیاہے۔عدالت نے ادارہ منہاج القران کے راہنما اور سانحہ ماڈل کیس کے مدعی جواد حامد کو نوٹس جاری کر تے ہوئے فریقین کے وکلا کو. بحث کے لئے آئندہ سماعت پر طلب کرلیاہے۔درخواست گزاروں کی جانب سے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ سپریم کورٹ کی طرف سے جاری فیصلہ کہ دہشت گردی عدالتوں میں دہشت گردی کے وہی مقدمات چل سکیں گے جس میں دہشت گردی کرنے کا مقصد شامل ہو گا،ذاتی لڑائی جس میں کوئی بھی بڑا واقع ہو وہ دہشت گردی میں نہیں آے گا، عدالت سے استدعاہے کہ سانحہ ماڈل ٹاون میں پولیس ملازمین کا دہشت گردی پھیلانے کا مقصد نہیں تھا۔

،کیس میں دہشت گردی کی دفعہ کو ختم کیا جاے اور مقدمہ ٹرائل کے لئے سیشن عدالت بھجوایا جائے،واضح رہے کہ انسداد دہشت گردی کی عدالت میں سانحہ ماڈل ٹاؤن کا مقدمہ 5سال سے زیر سماعت ہے۔

مزید : علاقائی