اپوزیشن سیاسی منافقت کی زندہ مثال،فارن فنڈنگ کیس میں بھی رسوا ہوگی:فردوس عاشق

اپوزیشن سیاسی منافقت کی زندہ مثال،فارن فنڈنگ کیس میں بھی رسوا ہوگی:فردوس ...

  



اسلام آباد/سیالکوٹ (مانیٹرنگ ڈیسک،آئی این پی) وزیراعظم کی معاون خصوصی اطلاعات ونشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ فارن میں اکاؤنٹس، کاروبار اور علاج کرانے والے فارن فنڈنگ کیس میں بھی منہ کی کھائیں گے۔معان خصوصی برائے اطلاعات و نشریات فردوس عاشق اعوان کا اپنے ٹویٹ میں کہنا تھا اپوزیشن سیاسی منافقت کی زندہ مثال بن چکی ہے، الیکشن کمیشن پر فارم 45 اور آر ٹی ایس کے حوالے سے الزام عائد کرنے والے آج نئے بہروپ میں الیکشن کمیشن کو دھمکیاں دے رہے ہیں مگر ان کو ناکامی ہوگی۔ علاوہ ازیں سیالکوٹ میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ نواز شریف کی بیماری محل سے جڑی ہے وہ محل پہنچتے ہی ٹھیک ہوجاتے ہیں، کئی دن سے نوازشریف  کی بیماری سے متعلق کوئی بات سامنے نہیں آئی جبکہ لیگی کارکن بھی پارٹی قائدکی موجودہ صحت کی صورتحال بتانے سے قاصر ہیں۔انہوں نے کہا کہ نوازشریف کی نبض پر ہاتھ رکھ کر کوئی سیاستدان ہی بتاسکتا ہے کہ ان کو سیاسی بیماری ہے، نواز شریف کی زندگی کو لاحق خطرات پاکستان سے نکلتے ہی ختم ہوگئے،معاون خصوصی نے کہا کہ شہبازشریف نے لوٹ پوٹ ہوکر پبلک اکا ونٹس کمیٹی کے چیئرمین کا عہدہ لیا اور چپکے سے استعفیٰ بھی دے دیا۔انہوں نے کہا کہ حکومت جاب پورٹل قائم کرنے جا رہی ہے اور یہ جاب پورٹل ہر صوبے میں ایمپلا ئمنٹ بیورو بنے گا۔انہوں نے کہاکہ نوجوانوں کو نوکریاں فراہم کرنا اہم حصہ ہے جبکہ کامیاب نوجوان پروگرام بھی اس کا اہم حصہ ہے، اگر ٹریننگ اور تجربہ ہم فراہم نہ کر سکیں تو بھی ہم صرف بے روزگاروں کی فوج تیار کرنے والے بن رہے ہیں۔معاون خصوصی فردوس عاشق اعوان نے  وزیراعظم کے نواز شریف کی صحت میں تبصرے کے سوال پر جواب دیتے ہوئے کہاکہ حقائق بولتے ہیں اور حقائق کبھی چھپتے نہیں اور سابق وزیراعظم نواز شریف آستین چڑھا چڑھا کر کریہ کریہ، گاؤں گاؤ ں ایک ہی گرد ان کرتے دکھائی دیتے کہ پاکستان کے اند ر اور اس عوام کے اندر رہتے ہوئے ووٹ کو عزت دوں گا اور میرا جینا اور مرنا عوام کے ساتھ ہے لیکن سب نے دیکھا کہ جیتے ہوئے جاتی امراء کا محل انہیں دستیاب تھا اور اب ایون فیلڈ کا محل دستیاب ہے جہاں پران کا دل ہشاش بشاش اور خوشگوارچہرہ بتا رہا ہے کہ وہ ٹھیک ہیں۔انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ ن کے ترجمانوں سے پوچھنا چاہتی ہوں کہ پاکستان میں میاں نواز شریف کے پلیٹ لیٹس اوپر نیچے،بلڈپریشر زیادہ کم، گردے میں سوزش آگئی،پاؤں سوجھ گئے، وارم آگیا اور یہ سب کچھ دن رات میڈیا کی سیکرینز پر تھی اور اب ترجمانوں کی آہ وبکا سن رہے تھے اور بار بار کہہ رہے تھے کہ میاں صاحب کی صحت کو شدید خطرات درپیش ہیں اور ایک میڈیا سیکرین  تو خصوصی طور پر ان کی سانسیں گن رہی تھی کہ میا ں نواز شریف دن میں کتنی بار سانس لیتے ہیں،میاں نواز شریف کو گئے کئی روز ہو گئے ہیں لیکن لیگی ترجمان ان کی صحت کی موجودہ صورتحال بتانے سے قاصر ہیں، عوام اور میڈیا کئی دنوں سے ان کی صحت کے بارے میں نڈھال ان کو بھی خبریں فراہم کریں جبکہ نواز شریف کے ذاتی معالج ڈاکٹر میاں صاحب کی محل سے نکلتے وقت او ر کسی ڈاکٹر سے ملاقات کی تصویر شیئر کردیتے ہیں لیکن وہاں کے ڈاکٹر کی پراسرار سیاسی بیماری پر رپورٹ نہیں جاری کی جاتی ہے۔انہوں نے کہاکہ ہمیں معلوم ہے کہ ان کی بیماری کہاں ہے اور اس سے جڑا مفاد کیا ہے، پاکستان میں پہلی بار ہوا ہے کہ کسی مجرم کی ضمانت سہولت اور عدالتوں کو کسیز میں مطلوبہ شخص سے ہوتی ہے اور یہ ایک سوالیہ نشان ہے، بچوں کی زمین لوٹ پوٹ ہو کہ اپوزیشن لیڈر کا عہدہ لیا اور چپکے سے چھوڑ گئے، عوام ان سب کی اصلیت جان گئی ہے۔

فردوس عاشق اعوان

مزید : صفحہ اول