مذہب کی جبری تبدیلی، اقلیتوں کے تحفظ کیلئے پارلیمانی کمیٹی قائم 

مذہب کی جبری تبدیلی، اقلیتوں کے تحفظ کیلئے پارلیمانی کمیٹی قائم 

  



اسلام آباد(آئی این پی) جبری مذہب کی تبدیلی سے اقلیتوں کے تحفظ کا معاملہ جبری تبدیلی مذہب سے اقلیتوں کے تحفظ کیلئے چئیرمین سینٹ نے پارلیمانی کمیٹی قائم کردی پارلیمانی کمیٹی میں سینیٹ اور قومی اسمبلی کے 22اراکین کو شامل کیا گیا ہے چئیرمین سینٹ کی ہدایت پر سینیٹ سیکرٹریٹ نے کمیٹی کے قیام کا نوٹفیکیشن جاری کردیا تفصیلات کے مطابق چیئرمین سینیٹ نے ملک میں جبری مذہب کی تبدیلی کے حوالے سے اقلیتوں کے تحفظ کیلئے چئیرمین سینٹ نے پارلیمانی کمیٹی قائم کردی پارلیمانی کمیٹی میں سینیٹ اور قومی اسمبلی کے 22اراکین کو شامل کیا گیا ہے۔پارلیمانی کمیٹی میں وفاقی وزرا پیر نور الحق قادری،  شیری مزاری، علی محمد خان،رانا تنویر بھی کمیٹی میں شامل ہیں اس کے ولاہ ایم این ای کیھئل داس کوہستانی، جئے پرکاش، لال چند، شنیلا رتھ اور ڈاکٹر درشن سمیت دیگر اقلیتی ارکان بھی شامل ہیں جبکہ اراکین سینیٹ میں، سینیٹر رانا مقبول، شگفتہ جمانی، عامر ڈوگر، عبدالواسع، سینیٹر انور الحق کاکڑ بھی کمیٹی میں شامل چئیرمین سینیٹ صادق سنجرانی نے پارلیمانی پارٹی کی تشکیل سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر سے مشاورت سے کی پارلیمانی کمیٹی اپنے پہلے اجلاس میں ٹی آو آر طے کرے گی، نوٹفیکیشن پارلیمانی کمیٹی اقلیتوں کے حقوق اور مذہب کی جبری تبدیلیوں بارے اقلیتوں کے تحفظ پر قانون سازی کا کام کرے گی۔

 پارلیمانی کمیٹی

مزید : صفحہ آخر