اہم تقرری پر صدر سے رابطہ، سمری آنے پر دونوں آئین و قانون کے مطابق کھیلیں گے: عمران خان

  اہم تقرری پر صدر سے رابطہ، سمری آنے پر دونوں آئین و قانون کے مطابق کھیلیں ...

  

        لاہور (نمائندہ خصوصی،مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں)  سابق وزیراعظم و پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ اہم تقرری کی سمری سے متعلق صدر سے رابطے میں ہوں اور وہ  پہلے مجھ سے مشورہ کریں گے،اہم تقرری پر وزیراعظم ایک مفرور کے پاس پوچھنے کیلئے جاتا ہے، میں تو اپنی جماعت کا سربراہ ہوں تو صدر مجھ سے ضرور بات کریں گے، سمری آنے کے بعد میں اور صدر آئین و قانون کے مطابق کھیلیں گے۔ نجی ٹی وی سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے عمران خان نے کہا میں سمجھتا ہوں جوحالات بنادیئے گئے قوم میں جذبہ ہے اسے قبول نہیں کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ کوئی سمجھتا ہے اپنا آرمی چیف لا کر ہمیں مار پڑوائے گا تو قوم اس کے خلاف کھڑی ہو گی، مجھ پر جو حملہ ہوا شہبازشریف پورا ملوث تھا،نواز شریف بھی جانتا ہو گا، تسنیم حیدر پر ہے کہ وہ پولیس اور عدالت کو کیسے شواہد پیش کرتا ہے،ہمارا ایک ہی مطالبہ ملک میں فوری انتخابات کرائے جائیں، مرضی کا آرمی چیف، چیئرمین نیب نہیں چاہتا، اداروں میں میرٹ چاہتا ہوں، نام فائنل ہونے کے بعد اپنے سیاسی حق کے استعمال کا فیصلہ کریں گے، سمری آنے کے بعد میں اور صدر آئین و قانون کے مطابق کھیلیں گے۔سابق وزیراعظم نے کہا کہ نواز شریف جس کو بھی آرمی چیف لگائے گا وہ متنازعہ ہو جائے گا، نواز شریف کی پوری کوشش ہے اپنا آرمی چیف لیکرآئے۔دوسری جانب عمران خان نے حکومت مخالف کال کو کامیاب بنانے کے لیے رابطے تیز کر دیئے۔ذرائع کے مطابق عمران خان نے مرکزی رہنماؤں سے تیاریوں پر ٹیلی فونک رابطے کیے جن میں لاہور سے راولپنڈی روانگی کے معاملات پر مشاورت ہوئی۔ مشاورت میں عمران خان کا بذریعہ ہیلی کاپٹر راولپنڈی پہنچنے پر اتفاق کیا گیا۔راولپنڈی میں کتنے روز قیام کرنا ہے، اس متعلق فیصلہ 26 نومبر کو راولپنڈی میں ہی ہوگا۔ عمران خان نے ارکان قومی و صوبائی اسمبلی کو کارکنان کو ساتھ لانے کی ذمہ داری دے دی۔ذرائع کے مطابق ہر ایم پی اے کو حلقے سے کم از کم 2 ہزار کارکنان ساتھ لانے کا ٹاسک دیا گیا۔ ہر ایم این اے کم از کم 3 ہزار لوگ لانے کے پابند ہوں گے۔چیئرمین پی ٹی آئی نے ہدایت کی ہے کہ قافلوں کی سکیورٹی کے لیے فول انتظامات کیے جائیں۔راولپنڈی ڈویژن کے صوبائی وزرا ٹینٹ سٹی میں پہنچنے والے قافلوں کی میزبانی کے ذمہ دار ہوں گے۔ جنوبی پنجاب اور خیبرپختونخوا کے رہنماؤں کو کم از کم 3 دن کا راشن ساتھ رکھنے کی ہدایت کی گئی ہے۔عمران خان نے رہنماؤں اور کارکنوں کو 25 نومبر تک راولپنڈی پہنچنے کی ہدایات کر دی۔عمران خان نے 40 ہزار سے زائد کارکنوں کے لئے خیمہ بستی تیار کرنے کی ہدایت کردی۔

عمران خان 

مزید :

صفحہ اول -