سارک کو اپنے مفادات کیلئے یرغمال نہیں بنایا جانا چاہیے ٗافتخارعلی ملک

سارک کو اپنے مفادات کیلئے یرغمال نہیں بنایا جانا چاہیے ٗافتخارعلی ملک

  

اسلام آباد (این این آئی)سارک چیمبرزآف کامرس اینڈ انڈسٹریز پاکستان شاخ کے نائب صدر افتخارعلی ملک نے کہاہے کہ بھارت کے معاندانہ رویے اورایجنڈے کی وجہ سے جنوبی ایشیا کے خطے میں پائیدار امن اورتجارتی واقتصادی سرگرمیوں کے فروغ کیلئے کوششوں کو نقصان پہنچ رہاہے ۔ وہ پاکستان فرنیچرکونسل کے سربراہ میاں کاشف اشفاق سے ملاقات میں بات چیت کررہے تھے انہوں نے کہا کہ سارک کو اپنے مفادات کیلئے یرغمال نہیں بنایا جانا چاہیے۔ انہوں نے تمام رکن ممالک پر زور دیا کہ دوطرفہ تجارت کے فروغ اور خطے سے غربت کے خاتمے میں مدد کے ذریعے سماجی انصاف کو یقینی بنایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت میں 30 فیصد بچے غربت کی لکیر کے نیچے زندگی بسر کر رہے ہیں، فریقین کو غربت کے خاتمے کیلئے اپنے وسائل بروئے کار لانے چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ دہشت گردی جنوبی ایشیا کیلئے ایک سنگین خطرہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کو مقبوضہ کشمیر کے عوام کی خواہشات کا احترام کرنا چاہیے اور اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق استصواب رائے کا حق دینا چاہیے۔ انہوں نے یہ بات واضح کی کہ جنوبی ایشیا میں سیاسی مذاکرات کیلئے سارک اب بھی ایک اہم فورم ہے۔ انہوں نے امریکہ پر زور دیا کہ وہ خطے میں تناؤ کم کرنے کیلئے اپنے کردار ادا کرے۔

انہوں نے وزیر اعظم محمد نواز شریف کو بھی سراہا جنہوں نے بھارتی وزیر اعظم مودی کے غربت اور جہالت کیخلاف جنگ کے بیان کے ردعمل میں کہا تھا ان چیلنجز سے خون اور گولیوں کے ساتھ نہیں نمٹا جاسکتا۔ اس موقع پر پاکستان فرنیچر کونسل کے چیف ایگزیکٹو میاں کاشف اشفاق نے کہا کہ ممالک اور خطوں کے درمیان رابطوں سے خطے میں ترقی کی نئی راہیں اور مواقع میسر آئیں گے، ویزا فری جنوبی ایشاء کیلئے کام کیا جانا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ سارک سیاسی تعاون کو فروغ دے سکتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ سارک خطے میں تناؤ ختم کرنے کیلئے جنوبی ایشاء کے رہنماؤں کے درمیان بات چیت کیلئے بھی ایک فورم ہے۔

مزید :

کامرس -