دینی کارکنوں کو دیوار سے لگانا حکومت کو مہنگا پڑے گا‘ مولانا سمیع الحق

دینی کارکنوں کو دیوار سے لگانا حکومت کو مہنگا پڑے گا‘ مولانا سمیع الحق

  

خانیوال (بیورونیوز ) دینی کارکنوں کے حقوق کی جنگ لڑنا ہماری ذمہ داری ہے ، ہر دینی کارکن کے وارث ہیں ،مذہبی راہنماؤں کو فورتھ شیڈول سے نکلوانا مشن ہے ،دینی کارکنوں کو دیوار سے لگانا حکومت کو مہنگا پڑے گا ۔ ان خیالات کا اظہار جمعیت علماء اسلام کے مرکزی امیر چیئرمین دفاع پاکستان کونسل مولانا سمیع الحق نے جمعیت علماء اسلام کے صوبائی جنرل سیکرٹری مفتی خالد محمود ازھر سے ٹیلی فونک گفتگو کرتے(بقیہ نمبر30صفحہ12پر )

ہوئے کیا ۔ انہوں نے کہاکہ فورتھ شیڈول کا غلط استعمال کیا گیا بے گناہ اور پر امن لوگوں کو بوگس رپورٹس کی بنیاد پر فورتھ شیڈول میں ڈالا گیا ۔ وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار سے ملاقات کے دوران ہم نے دینی کارکنوں کی پریشانیوں اور مشکلات سے آگاہ کیا اور واضح کیا کہ دینی کارکنوں کو دیوار کے ساتھ لگایا جارہا ہے مدارس ،مساجد اور علماء کے خلاف سازشیں عروج پر ہیں ۔ایسی پالیسیاں حکمرانوں کیلئے باعث شرم اور قابل مذمت ہیں وزیر داخلہ نے مدارس ،مساجد ،علماء و مشائخ کے کردار اور خدمات کو سراہا اور فی الفور فورتھ شیڈول میں شامل لوگوں کے کینسل شدہ شناختی کارڈ ز اور منجمد اکاؤنٹس بحال کرنے اعلان کیا اور مزید وعدہ کیا کہ فورتھ شیڈول میں شامل راہنماؤں اور کارکنوں کی لسٹوں کی جانچ پڑتال کرکے پر امن لوگوں کو فورتھ شیڈول سے نکالیں گے اسی طرح 3 سال سے زیادہ عرصہ تک فورتھ شیڈول میں رہنے والے لوگوں کو بھی فورتھ شیڈول سے نکالیں گے ۔مدارس کے حوالے سے علماء و مشائخ کی مشاورت سے پالیسی تشکیل دیں گے اور دینی کارکنوں کو مایوس نہیں ہونے دیں گے دینی کارکن ہمارے سرمایہ ہیں اور ہم اس کا تحفظ کریں گے ۔

مولانا سمیع الحق

مزید :

ملتان صفحہ آخر -